Image result for monument valley
ہر چیز سے عیاں ہے،ہرشے میں نہاں ہے،خالِق کائنات، مالِک کائنات
عقلِ کُل،توانائی کُل، ہمہ جہت، ہمہ صِفت،خالِق کائنات، مالِک کائنات
آنکھیں کہ جِن سے میں دیکھا ہوں میری نہیں، عطائے خُداوندی ہے
  پاؤں کہ جِن سے میں چل تا ہوں میرے نہیں،عطائے خُدا وندی ہے
غرض یہ کہ میرے  وجود کا ذرہ  ذرہ   میرا  نہیں ،عطائے خُداوندی ہے
میرے خالِق میرے مالکِ میرے پروردگارانِ نعمتوں کا بے انتہا شُکریہ  


Friday, February 16, 2018

شاید ذہن کی ساخت ہی ایسی ہو !!۔

منجانب فکرستان
برائے غور و فکر
 کسان کا قدیم ذہن اپنی فصل کو نظِر بد سے بچانے کیلئے فکرمند تھا اور کوئی  ٹوٹکا چاہتا تھا ایسے میں کسان کے جدید ذہن نے  ٹوٹکا فراہم کیا کہ اپنی فصل کے قریب زیادہ سرچ کی جانے والی ماڈل کی بڑی سی نیم عُریاں تصویر لگاؤ، تُمہاری فصل کی طرف کوئی آنکھ اُٹھا کر بھی نہیں دیکھےگا۔۔
یوں قدیم ذہن ، جدید ذہن کا شاندار ملاپ ظہور پزیر ہُوا ۔

ہر مذہب والے آئے دن اپنے مذہب  کے احیاء کی بات کرتے ہیں۔ محسوس یوں ہوتا ہے کہ انسانی ذہن میں جو امیج یا بات پڑ جائے اُسے جدیدیت کے تقاضے بھی نہیں مِٹاسکتے ۔۔۔۔۔
نوٹ : پوسٹ میں کہی گئی  باتوں سے  اتفاق کرنا نہ کرنا  آپ کا  حق  ہے ۔اب جازت۔۔
{  رب   مہربان  رہے  }

Wednesday, January 10, 2018

جبکہ قُرآن کے مُطابق ۔۔۔۔

منجانب فکرستان (جبکہ قُرآن کے مُطابق
کیا یہ غوروفکر کا مُقام نہیں ہے کہ اسرائیلی پارلیمان نے"سبت "(ہفتہ) کے دن بھی کام/ کاروبار جاری رکھنے کی منظوری دے رہی ہے۔
جبکہ تورات کی کتاب خروج میں احکاماتِ عشرہ کا پانچواں حُکم یوں ہے۔
٭ 5:سبت کے دِن کو یاد سے پاک رکھنا۔ (خروج 20:8) چھ دِن تک تُو محنت سے اپنا سارا کام کاج کرنا۔ (خروج 20:9)۔۔ساتواں دِن خداوند تیرے خدا کا سبت ہے۔ اُس دِن نہ تُو کوئی کام کرنا نہ تیرا بیٹا یا بیٹی، نہ تیرا نوکر یا نوکرانی، نہ تیرے چوپائے اور نہ ہی کوئی مسافر جو تیرے یہاں مقیم ہو۔ (خروج 20:10) کیونکہ چھ دِن میں خداوند نے آسمانوں کو، زمین کو، سمندر کو اور جو کچھ اُن میں ہے، وہ سب بنایا۔ لیکن ساتویں دِن آرام کیا اِس لیے خداوند نے سبت کے دِن کو برکت دِی اور اُسے مقدس ٹھہرایا۔ (خروج 20:11)۔
(سورة البقرة) پھرتمہیں اپنی قوم کے اُن لوگوں کا قصہ تو معلوم ہی ہے جنہوں نے سبت کا قانون توڑا تھا ہم نے انہیں کہہ دیا کہ بندر بن جاؤ اور اس حال میں رہو کہ ہر طرف سے تم پر دھتکار پھٹکار پڑے (65) ابو الاعلیٰ مودودی۔
----------------------------------------------
http://www.dw.com/ur/%DB%8C%D9%88%D9%85-%D8%A7%D9%84%D8%B3%D8%A8%D8%AA-%D9%BE%D8%B1-%DA%A9%D8%A7%D8%B1%D9%88%D8%A8%D8%A7%D8%B1-%D8%A7%D8%B3%D8%B1%D8%A7%D8%A6%DB%8C%D9%84%DB%8C-%D9%BE%D8%A7%D8%B1%D9%84%DB%8C%D9%85%D8%A7%D9%86-%DA%A9%D8%A7-%D9%86%DB%8C%D8%A7-%D9%82%D8%A7%D9%86%D9%88%D9%86/a-42083150
٭
https://ur.wikipedia.org/wiki/%D8%AF%D8%B3_%D8%A7%D8%AD%DA%A9%D8%A7%D9%85
{  رب   مہربان  رہے  }

Thursday, November 30, 2017

انسانی شعور صدیوں سے سرگراں ہے۔۔

منجانب فکرستان 
برائے غور و فکر
امجد اسلام امجد کی زندگی کا  ناقابل فراموش واقعہ "سُرخاب" میں  جِس کسی نے پڑھا ہوگا، اُسکے ذہن نے دعوتِ فکر دی ہوگی۔
اُنکا یہ واقعہ کائناتی مظہراور انسانی زندگی کے بارے میں ایسا سوال اُٹھاتا ہے کہ جس کے حل کیلئے انسانی شعور صدیوں سے سرگراں ہے۔۔
اُن دوستوں کیلئے واقعے کا اقتباس حاضر ہے کہ جنکی نظروں سے یہ واقعہ نہ  گُزرا ہو۔  حسبِ روایت آخر میں اصل سائٹ کا لنک  اِسکے علاوہ واقعے کو مزید نمایاں کرتے وڈیو کے بول ۔۔ 
 امجد اسلام امجد "شیزان" میں دوستوں کے ساتھ تبالہ خیال میں  مصروف  تھے کہ اچانک کسی خیال میں کھوکر خاموش سے ہوگئے، ایسے میں اُنہوں نے دیکھا کہ سامنے سے ایک بیرا ٹرے میں چائے کی پیالیاں و دیگر برتن تھامے چلا آرہا تھا کہ وہ لڑکھڑاگیا ،ٹرے ہاتھوں سے ِپھسل کر فرش پر جا گری یوں برتن کرچی کرچی ہوگئے، بیرا کرچیاں سمیٹنے لگا،اتنے میں امجد صاحب کی نگاہ باہر کی جانب اُٹھی تو دیکھتے کیا ہیں کہ فریدہ خانم نیلے رنگ کی ساڑی میں ملبوس سیڑھیاں چڑھتی چلی آرہی تھیں۔کہ اچانک امجد صاحب اس خیالی تصور سے باہر نکل آئے ۔ انہوں نے جو کچھ دیکھا تھا وہ  سب واہمہ تھا ۔نہ  بیرا سامنے سے آیا تھا،نہ ہی  برتن ٹوٹے تھے  نہ ہی فریدہ خانم  آئی تھیں۔۔۔
تاہم امجد صاحب ابھی اس خیال سے بمشکل باہر نکل ہی پائے تھے کہ دیکھتے کیا ہیں کہ سامنے سے وہی بیرا اُسی طرح سے ٹرے میں چائے کی پیالیاں و دیگر برتن تھامے چلا آرہا تھا کہ وہ لڑکھڑاگیا ، اُسی  طرح سے ٹرے ہاتھوں سے ِپھسل کر فرش پر جا گری برتن کرچی کرچی ہوگئے، بیرا کرچیاں سمیٹنے لگا،اتنے میں امجد صاحب کی نگاہ باہر کی جانب اُٹھی تو دیکھتے کیا ہیں کہ فریدہ خانم وہی نیلے رنگ کی ساڑی میں ملبوس اُسی طرح سیڑھیاں چڑھتی چلی آرہی تھیں، جیسا کہ امجد صاحب نے تصور میں دیکھا تھا،بالکل ویسا ہی حقیقی زندگی میں بھی ہُوا ۔ گویا ( ایکشن ری پلے) ۔۔۔
نوٹ : پوسٹ میں کہی گئی  باتوں سے  اتفاق کرنا نہ کرنا  آپ کا  حق  ہے ۔اب جازت۔۔
{  رب   مہربان  رہے  }
http://e.jang.com.pk/11-12-2017/karachi/mag13.asp

Thursday, November 9, 2017

بہتے دریا میں سے ۔۔۔

منجانب فکرستان 
 9نومبرمحمداقبال ؒکا140واں یوم ولادت
سچّی بات یہ ہے کہ علامہ اقبال کی  فکر نے میری بصیرت میں اتنا اضافہ نہیں کیا  کہ جتنا کہ اضافہ  اُنکی ہمہ جہت فکر کے بارے میں  لکھے مضامین نے کیا،اِسکا بنیادی سبب  یہ ہے کہ دانشورانہ فکر کے بارے میں رائے بھی وہی  شخص دے سکتا ہے کہ جو کہ صاحبِ بصیرت ہو۔یہ مضامین چاہے علامہ کی فکر کی موافقت میں  ہوں میں کہ مُخالفت میں، پڑھنے والوں کو اِن میں بصیرت ملتی ہے کیونکہ یہ مضامین علامہ کی شاعری و خُطبات میں موجود  جہتوں کو حوالہ  بنا کر  لکھے گئے ہیں، اِن مضامین میں میرے خیال کے موجب دانشوروں نے گویا علم و بصیرت کے دریا  بہائے ہیں ۔۔۔ اِس بہتے  دریا میں سے میں نے بھی  جہاں تک ممکن ہوسکا اپنی علم کی پیاس بجھائی ہے۔۔
دانشوروں نے علامہ کی ہمہ جہت فکر  کے حوالے سے اِس قدر کہ زیادہ مضامین لکھے گئے  ہیں کہ شاید اسکی  مثال  برصغیر  میں ملنا مشکل ہے ۔
نوٹ : پوسٹ میں کہی گئی  باتوں سے  اتفاق کرنا نہ کرنا  آپ کا  حق  ہے ۔
{  رب   مہربان  رہے  }

Friday, October 27, 2017

انسانی ضمیر کی حس، پسپا ہوتی جارہی ہے۔

منجانب فکرستان 
 غور طلب جملوں کی شیئرنگ
 انسانی ضمیر کی حس،بیچاری پسپا ہوتی جارہی ہے، نمودونمائش کی حس  فتح مند ہوتی جارہی ہے۔ 
سوئٹزرلینڈ کا سیاحتی پریمی جوڑا پریم نشانی تاج محل دیکھنے آیا ،ہندو انتہا پرستوں نے اتنا مارا کہ سر پھاڑ دیا،جبکہ دیکھنے  والے بجائے پریمی جوڑے کو بچاتے اُنکی  تصاویر لیتے رہے۔
 افسوسناک بات ہے کہ حالت بہت خراب ہے، ترقی دیکھنے کے لئے لوگ ممبئی نہ جائیں لاہور جاکر دیکھ لیں گورنر سندھ محمد زبیر
وزرا کی اتنی بڑی فوج ہے ایوان میں کوئی نہیں آتا،سینیٹ کے اجلاس میں وفاقی وزراء کی عدم حاضری پر برہم چیئرمین رضا ربانی

  Deutsche Well10/26/2017

جنگ 10/27/2017

جنگ 10/27/2017
نوٹ : پوسٹ میں کہی گئی  باتوں سے  اتفاق کرنا نہ کرنا  آپ کا  حق  ہے ۔
{  رب   مہربان  رہے  }

Thursday, October 26, 2017

آجکل قسمت کی دیوی" چین" پر بہت مہربان ہے ۔

منجانب فکرستان

غور طلب جملوں کیشیئرنگ
ایسا اسلام جو کہ معتدل ہے اور جس میں دنیا اور دیگر مذاہب کے لیے جگہ ہو۔ کوشاں ہیں شہزادہ محمد بن سلمان . 
 نئی سائنسی تحقیق کے مُطابق موت صرف جسمانی ہوتی ہے، شعور زندہ رہتا ،وہ سُن سکتا ہے، وہ چیزوں دیکھ سکتا ہے ، یہاں تک کہ اُسے چیزوں کے درمیان بھی محسوس کیا گیا ہے۔۔ 
 کیٹلین کولمین اپنی رہائی کے بعد اپنے پہلے انٹرویو میں وہ  مع حجاب مکمل اسلامی طرز لباس میں نظر آئیں۔۔ گویا، اتنے مانوس صیاد سے ہو گئے،اب رہائی ملے گی تو۔۔۔فکرستان۔
 یونانیوں کا عقیدہ تھا کہ قسمت کی دیوی مہربان  ہو تو مٹی پکڑو تو سونا ہوجائے۔۔
 چینی سائنسدان تجرباتی طور پر سمندری پانی سے کاشت  سے تقریباً 4.5 ٹن فی ہیکٹر پیداوار کی توقع کررہے تھے لیکن قسمت کی دیوی مہربان ہے، یہ پیداوار 9.5 ٹن فی ہیکٹر  حاصل ہوئی ۔۔

http://www.bbc.com/urdu/world-41745064
http://www.independent.co.uk/news/science/mind-works-after-death-consciousness-
sam-parnia-nyu-langone-a8007101.html
https://steemit.com/technology/@danish1980/china-invented-magic-rice
نوٹ : پوسٹ میں کہی گئی  باتوں سے  اتفاق کرنا نہ کرنا  آپ کا  حق  ہے ۔
{  رب   مہربان  رہے  }

Tuesday, October 24, 2017

سوشل میڈیا کی طاقت !!۔

منجانب فکرستان:غور طلب جملوں کیشیئرنگ
سماجی رابطوں خصوصاً ٹوئٹر کے بغیر وائٹ ہاوس تک نہیں پُہنچ سکتا تھا۔صدر ڈونلڈ ٹرمپ
سوشل میڈیا پر فیک نیوز اور فیک پروپیگنڈا ایک بہت بڑا ہتھیار بن گیا ہے وزیرداخلہ احسن اقبال
۔حکومت جی ڈی پی کا 60 فیصد سے زیادہ قرضے نہیں  لے سکتی لیکن ہمارے قرضے 65 فیصد تک پہنچ گئے ہیں۔ڈاکٹرمرزا اختیار بیگ
پاکستان آج دنیا بھر میں ایک ابھرتی ہوئی معیشت اور سرمایہ کاری کے لیے پر کشش ملک قرار دیا جاہے ہے،وزیرداخلہ
 5٭۔پشاور حلقہ این اے 4 پی ٹی آئی کے ارباب عامر  جماعت اسلامی کے واصل فاروق سے بھی مقابلہ  کریں گے۔
نوٹ : پوسٹ میں کہی گئی  باتوں سے  اتفاق کرنا نہ کرنا  آپ کا  حق  ہے ۔
{  رب   مہربان  رہے  }

Wednesday, October 11, 2017

اب تو یہی معیار ہے، یہی چلن ہے ۔۔

منجانب فکرستان 
 غوروفکر کیلئے
گزُرے زمانوں میں دلیل کی نوعیت قائدے قانون کی پابند ہوتی تھی جس  بنا لوگ دلائل پر ایک دوسرے کو قائل کرلیتے تھے، تاہم مجودہ زمانے  میں یہ بات ناممکنات میں سے ہے، جسکے گواہ ہیں روزانہ کے ٹاک شو ۔
حال کی مثال یہ ہے کہ ایوانا ٹرمپ دلائل دے رہی ہیں کہ وہ ’خاتونِ اوّل‘ ہیں۔ممکن ہے آپکو ایوانا کے دلائل بے ڈھب لگیں جبکہ وہ امریکی ناول نگار بھی ہیں، ایسے میں یہ سوال بنتا ہے کہ امِت شاہ کے بیٹے حق میں بی جے پی کی جو دلائلی قوالی چل رہی ہے کیا اُس میں کوئی بات ڈھب والی ہے؟
مودہ دور کے دلائل کا یہی ڈھب ہے،یہی معیار ہے ،یہی چلن ہے، چاہے پاکستان ہو کہ بھارت یا کہ  ہو امریکا ۔۔۔۔۔
تفصیلات کیلئے دیکھیں بی بی سی ۔۔۔
http://www.bbc.com/urdu/world-41568569
http://www.bbc.com/urdu/regional-41553127
نوٹ : پوسٹ میں کہی گئی  باتوں سے  اتفاق کرنا نہ کرنا  آپ کا  حق  ہے ۔
{  رب  مہربان  رہے  }

Wednesday, September 20, 2017

انسان کا دشمن کون ؟ ۔

منجانب فکرستان
غوروفکر کیلئے
ماسکو  میں نصب دنیا کی خطرناک ترین سمجھی جانے والی بندوق  کے موجد میخائل کلاشنکوف کا 30 فٹ اُونچا دیو قامت مجسمہ کی رونمائی ہوئی، ۔۔مسلح افواج، ملیشیا اور شدت پسند کہلانے والے بھی اپنے دشمن(انسان) کو مار نے کیلئے اسی ہتھیار کلاشنکوف کو استعمال کرتے ہیں۔
اس تقریب کی قابلِ غور بات پادری کا مجسمے پر مقدس پانی کا چھڑکاؤ کرنا ہے۔
 عیسائی سمیت دُنیا کے تمام مذاہب انسانی جان کی حرمت کے مدعی ہیں، تاہم تاریخ انکے اس دعوٰے کی نفی کرتی ہے ۔ بلکہ تاریخ تو یہ دعویٰ کرتی نظر آتی ہے کہ مذہب اور فرقوں کے نام پر آج بھی مہذب کہلانے والا انسان، دوسرے انسانوں کو خون نہلا رہا ہے۔حالیہ مثال  میانمار میں روهینگیا مسلمانوں کی ہے
نوٹ: پوسٹ میں کہی گئی  باتوں سے  اتفاق کرنا نہ کرنا   آپ کا  حق  ہے ۔
{  رب  مہربان  رہے  }