Image result for monument valley
ہر چیز سے عیاں ہے،ہرشے میں نہاں ہے،خالِق کائنات، مالِک کائنات
عقلِ کُل،توانائی کُل، ہمہ جہت، ہمہ صِفت،خالِق کائنات، مالِک کائنات
آنکھیں کہ جِن سے میں دیکھا ہوں میری نہیں، عطائے خُداوندی ہے
  پاؤں کہ جِن سے میں چل تا ہوں میرے نہیں،عطائے خُدا وندی ہے
غرض یہ کہ میرے  وجود کا ذرہ  ذرہ   میرا  نہیں ،عطائے خُداوندی ہے
میرے خالِق میرے مالکِ میرے پروردگارانِ نعمتوں کا بے انتہا شُکریہ  


Saturday, April 30, 2011

میری قُرآن فہمی / ایک نظر میں ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

فکرستان سے پیشِ خدمت ہے پوسٹ ٹیگز: البقرہ۔ 62/ المائدہ۔ 69 / ہائی جیکروں / ایک حل  
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
میری سابقہ پوسٹ پر دو (ای-میل) اور ایک تبصرہ میں اس غلط فہمی کا اظہار کیا گیا کہ میں قُرآن کو سائنسی تشریح یا فارمولوں والی کتاب سمجھ تا ہوں ، ممکن ہے میری پوسٹ سے ایسا تاثر ابھرا ہو لیکن میرے کہنے کا مقصد یہ ہے کہاللہ نے انسان کو اسما سکھائےاورانسان  میں اپنی روح پھُونکی ہے۔ ( جو تخلیق کرنے کی حامل ہے )۔ جس بنا پر فرشتوں کو سجدہ کرایا گیا ۔  قُرآن میں کائنات میں موجود اشیا پر غور و فکر کرنے کی ترغیبات موجود ہیں۔ اسی غور وفکر کا نتیجہ سائنسی نظریات ، ایجادات اور فار مولے ہیں  مثلاً کمپیوٹر نتیجہ ہے  غور و فکر اور انسان میں پھونکی گئی تخلیقی روح کا ۔ اب جو انسان یا قوم غور و فکر کرے گی اُسکو اُس  پھُونکی ہوئی روح کا وجدان حاصل ہوگا جس سے کوئی سائنسی نظریہ یا سائنسی فار مولا تخلیق ہوجائے گا ، قُرآن کی کثیر آیات غور و فکر کی دعوت دیتی ہیں جو سائنس کا  ماخذ ہیں کوئی انسان یا جو قومیں غور و فکر میں جہاد کر رہی ہے گویا وہ ان آیاتِ مبارکہ پر عمل کر رہی ہیں ، دُنیا وی ودینوی تمام علوم کی ماخذ یہی قُرآنی آیات ہیں قُرآن رہتی دُنیا تک کے لیے ہے تمام زمانوں کی فکر کی ماخذ یہی آیاتِ ہیں۔ دُنیا کی سربراہی اُنہیں کی ہاتھ میں ہے جو ان آیات کے مُطابق جہادی غوروفکر میں مبتلا ہیں ۔
 اسلام کے ہائی جیکروں نےمسلمان قوم کو تو قُرآن کو صرف ثواب اور بخشش کے لیے بے سمجھے حفظ کر نے/تلاوت کرنے پر لگادیا ہے ۔ تاکہ ان کی اجارہ داری قائم رہے اب جس طرح چاہیں یہ قُرآن کی تشریح و تفسیر کرتے پھریں چونکہ قوم کو تو ثواب اور بخشش کے سُنہرے خوابوں میں سُلا دیا گیا۔ اسی لیے تو میں ٭ نئے مسلمان بننے والوں سے اُمید لگائے ہوئے ہوں کہ یہ لوگ/ اسلام کا / قُرآن کا /خُدا  کا /حقیقی چہرہ دِکھائیں گے ۔    
  قُرآنی آیات پر غور و فکر سے فرقہ پرستانہ نمازوں  کا ممکن العمل ایک حل :قُرآن میں لفظ صلاۃ 79 بار آیا ہے ۔ لیکن نماز کا طریقہ ایک بار بھی نہیں آیا ہے ۔ آپ کہیں گے کہ حضورﷺ نے طریقہ بتادیا ہے اور مسجد نبوی میں مسلسل نمازیں پڑھی جاتی تھیں ۔ لیکن  پھران مسلسل اور مستقل پڑھی جانے والی نمازوں میں اتنے زیادہ فرق کہاں سے آگئے ۔جو عمل تواتر کے ساتھ متواتر ہوتا رہا ہو اُس میں فرق کیسےآسکتا ہے ؟غور طلب بات ہے ۔ چلو آگیا ، اب ہر فرقہ کا شخص  یہ کہہ رہاہے کہ وہ حضورﷺ کے طریقہ کے مُطابق نماز پڑھ رہا ہےاور دوسرا غلط پڑھ رہا ہے ۔ قُرآن میں طریقہ تو نہیں ہے لیکن دو آیت ایسی ہیں کہ جن سے رہنمائی مل سکتی ہے ۔البقرہ کی 62 اور المائدہ 69۔ترجمہ ہیڈر پر موجود ہے جس کے مُطابق  بُنیادی با تیں اللہ پر ایمان ، روز قیامت پر یقین اور عمل  صالح ہیں  ۔ صابیوں ،یہودیوں اور عیسایوں کی عبادت مُسلمانوں سے جُدا گانہ ہے  لیکن اُن سے کہا جارہا ہے کہ درج بالا آیات کی شرائط جو بھی پوری کرے گا اُسکی عبادت قبول ہوگی اُسے اُسکا اجر ملے گا اُسے کسی رنج و غم میں مبتلا ہونے کی ضرورت نہیں تو پھر مُسلمانوں کو کیا پڑی ہوئی ہے کہ  جوایک دوسرے  کی نمازوں پر اعتراض کریں یا ایکدوسرے کو کافر کہیں ۔ مُسلمان بھی جس طرح چاہیں نماز پڑھیں  قُبول ہونگیں ۔اب یہ کام عُلمائے کرام کا ہے کہ اپنی اناؤں کو بالائے طاق رکھ کر اِن آیات کی روشنی میں متفقہ اعلان کریں کہ دل سےجسطرح چاہیں نماز پڑھیں اُنکی نمازیں قبول ہونگیں اس سے فرقہ پرستی پر زد پڑے گی اور امت ِ میں اتحاد ہوگا یہ ایک چھوٹی سی مثال ہے آیات پر غور و فکر کی کہ جس سے فرقہ پرستی کا حل نکل سکتا ہے ۔ 
آپکا بُہتشُکریہ۔
نوٹ: تبصرے کرسکتے ہیں لیکن پبلش نہیں ہونگے البتہ جواب دیئےجاسکتے ہیں  ۔ 
خلوص کا طالب ۔( ایم ۔ ڈی )۔

Monday, April 25, 2011

مستقبل کا اسلام / سوچ کے حوالے سے۔٭٭٭٭٭٭٭٭٭

        
فکرستان سے پیش ہے پوسٹ ٹیگز: طرز عبادت/ حجاب/ جہاد/نئے پیغمبر/فوکس
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
اب اس رائے میں اختلاف کی گُنجائش نہیں رہی کہ پروپگنڈہ کے زریعے اسلام کے چہرہ کو مسخ کرنے کی کوششوں کے باوجود اسلام پھیل رہا ہے ۔اسکی وجہ یہ ہے کہ ابلاغیات نے فکر کو جو وسعت عطا کی ہے اُس وسعت کو عیسائی مذہب فِل کرنے سے قاصر نظر آتا ہے چونکہ بائبل کو مختلف لوگوں نے لکھا ہے اور سب نے زمانے کی مناسبت سے اپنے عقیدے عیسایت کو موثر بنانے کے لیے اپنا اپنا تعصب ڈالا ۔جو گُذشتہ زمانے کے لیے تو موثر تھا لیکن اِس نئی ترقی یافتہ فکر کو تثلیثی مذہب میں کوئی روحانیت محسوص نہیں ہورہی ہے مسلمانوں کا سادہ طرز عبادت اُنہیں مُتاثر کر رہا ہے ۔ عیسائی خواتین کو حِجاب میں بھی کشش محسوس ہورہی ہے وہ حجاب کو اپنانا چاہتی ہیں اِن وجوہات نے کئی عیسائی خواتین کو دائرہ اِسلام میں لے آئیں ۔
یہ ایک حقیقت ہے کہ جو کام عُلمائے کرام جہاد جہاد چِلا کر حاصل نہیں کرسکے وہ کام حجاب کررہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ مغربی اور امریکی معاشرےحجاب سے خوف کھانے لگے ہیں ۔یہ ان معاشروں کی جڑوں کو ہلا رہا ہے ۔
   گوہم بھی میک اپ شُدہ روحانیت لیئے پھر رہے ہیں ۔ مُجھے یقین ہے اسلام پر چڑھایا گیا یہ غازہ ،  نئے  مسلمان اُتار پھینکیں گے چونکہ جب جب خُدا کے دین پر غازہ چڑھا یا گیا تو ایک نئے پیغمبر کو آنا پڑا اور نئے سرے سے جدوجہد کرنا پڑی  اب آخری پیغمبرحضرت محمد ﷺ آچُکے اب کوئی پیغمبر نہیں آئیگا۔ اب یہ کام نئے مُسلمان کریں گے  یہ جدید فکر سے آراستہ ہیں ۔ یہ اسلام سے جھاڑ جھنکاڑ کا صفایا کرکے اسلام  کا  حقیقی چہرہ دِکھائیں گے یہ قُرآن میں سے وہ کچھ نکالیں گے جو آج تک علُمائے کرام نہیں نکال پائے  ۔ آپ کہیں گے کیا نکالیں گے ؟
اس بات کو میں ایک بلاگر ساتھی پر گُزرے تجربہ سے واضح کرنے کی کوشش کرتا ہوں میرا یہ ساتھی نماز پڑھنے مسجد گیا وہاں دیکھاکہ ایک شخص میلے کُچیلے کام کے کپڑوں میں ملبوس نماز پڑھنے چلا آیا ہے (یہ تھی ظاہری شکل )میرے بلاگر ساتھی کو  بُہت ناگوار گُزرا مسجد میں میرے ساتھی کا فوکس وہی شخص بن گیا اس فوکس کا  یہنتیجہ نکلا کہ اُس شخص میں سے ایک نئی جہت برآمد ہوئی جو پہلی جہت سے بالُکل مختلف تھی (یہ تھی باطنی شکل )۔ اب ناگواریت کی جگہ خوشگواریت نے لے لی تھی اب اُس شخص کا چہرہ پُر نور لگ رہا تھا اب وہی شخص اچھا لگنے لگا تھا اور میرا ساتھی اپنی سابقہ سوچ پر اپنے آپ پر ملامت کر رہاتھا یہ سارا کرشمہ فوکس کا تھا اگر میرا یہ دوست اپنا ذہن اُس شخص پر فوکس نہ کرتا تو بصیرت حاصل کرنے سے محروم رہتا  ۔ باقی تفصیل باٹم لنک ٭پر ۔ 
جب جدید ذہن کلامِ خُدا یعنی قُرآنی آیات کی مفہوم پر فوکس رکھیں گے تو یہ وُہ کچھ نکالیں گے جو جدید فکر اور سائینس سے ہم آہنگ ہوگا ۔ چونکہ قُرآن خُدا کا کلام رہتی دُنیا تک کے لیے ہے اس لئے یہ زمانے کی گردش اور جدید فکر  کے ساتھ ہے ۔   
  جس  وقت ہم قُرآن سے بصیرت حاصل کر رہے تھے ہم دُنیا کے حکمراں تھے ۔اب ہماری میراث سے اغیار فائدہ اُٹھا رہے ہیں ۔جبکہ ہمیں ان باریکیوں میں اُلجھا دیا گیا کہ آپکی نماز قبول نہیں ہوگی اگرآپنے ہاتھ اس طرح نہ باندھا ،انگو ٹھا ایساہوناچاہئے ، انگلیاں اسطرح ہونی چاہئیے ٹانگوں کے درمیان اِتنا فاصلہ ہونا چاہئیے  ۔  ان بارکیوں کی وجہ سے ہم تنگ ذہن اور عدم برداشت کے شکار ہوگئے ہیں ۔انشااللہ یہ نئے مُسلمان ان سب جھاڑ جھنکاڑ  کا صفایا کریں گے ۔ بے شک یہ نئے مسلمان عیسایت کی باتیں بھی اپنے ساتھ لائیں گے ، عیسایت اسلام ہی کی تحریف شُدہ شکل ہے جب یہ اسلام کی اصل شکل یعنی اسلام کے بُنیادی فلسفہ کو اپنا لیں گے تو یہ ایک دوسرے میں ضم ہوجائیں گے اسلام میں مُلا اور عیسایت میںپادریوں  نے جو خرافات ، جھاڑ جھنکاڑ ڈالیں ہیں یہ لوگ اُسکا  صفایا کردیں گے پھر یہ مغربی اور امریکی معاشرے کا اکثیریتی مذہب بن جائے گا  بے شک اس عمل کیلئے عرصہ درکار ہوگا 
                                کولون کی ایک مسجد میں سالانہ ’اوپن ڈے‘ کے موقع پر مقامی کمیونٹی کے ارکان مہمانوں کے ساتھ گفتگو کر رہے ہیں                                                       
 سادہ طرز عبادت (سجدہ) ذات کی نفی اور خواتین کا حجاب اسلام کی سربُلندی کا باعث بن رہے ہیں ۔ 
اِسکو میرا خواب نہ سمجھیں اِ سکی مثال میں جرمنی سے دونگا جرمنی کے لیڈران دیگر مغربی لیڈران کی طرح بُہت غُصہ میں آتے تھے کہ یہ مُسلمان ہم میں ضم کیوں نہیں ہوتے ؟ اب صدر اور وزیر داخلہ  کہہ رہے ہیں اسلام جرمن معاشرہ کا حصّہ ہے ۔ میرے خیال میں یہ ایک بڑی تبدیلی ہے ۔جسکی تفصیل  کیلئے درج ذیل لنک٭ پر جائیں۔
 نوٹ :  تبصرے بند ہیں ۔ مُجھے دیں اجازت۔ آپ کا شُکریہ ۔
٭جب کلامِ خُدا (قُرآن) کو سمجھ کر پڑھیں گے٭ تب ہی خُدا اور اُسکی منشا کو پائیں گے٭   
خلوص کا طالب ۔( ایم - ڈی )۔ 
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
 ٭ مکمل تفصیل کیلئے ساتھی بلاگر کا لنک جو نماز میں تجربہ سے گُزرے۔ 

 

 ٭ اسلام جرمنی کا حصہ ہے، وزیر داخلہ کے مؤقف میں نرمی | معاشرہ | Deutsche Welle | 28.03.2011

Saturday, April 16, 2011

۔ ۔ ۔ رُوحانی خلا 0 مادی خلا 0 ۔ ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 فکرستان سےپیش ہے پوسٹ ٹیگز: قُرآن / تثلیث / بدھ مت/فلسفہ/  قدرتی عمل/ موسیقی
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
در اصل  مغرب اور امریکہ والے ایسے منصوبے چاہتے ہیں کہ جس سے مسلم معاشرہ جلد از جلد ویسٹرنمعاشرے میں ضم ہوجائے ۔ چونکہ بنیاد پرست عیسائی اس خوف میں مبتلاہوگئے ہیں کہ کہیں ایسا نہ ہوجائے کہ ہمارا معاشرہ اسلامی معاشرہ میں ضم ہونے لگ جائے ۔ (چونکہ تثلیث والا مذہبی فلسفہ نئی نسل کو مُتا ثر نہیں کرپا رہا ہے) اسی خوف کے تحت  پالیسیاں اور قانون بنائے جا رہے ہیں ظاہر ہے خوف کے تحت قانون بنائے جائیں گے تو اُس میں سُقم رہے گا ۔ مثلاً فرانس کا  برقعہ پابندی قانون ملاحظہ فرمائیں آپ برقعہ پہن کر کار میں پورا فرانس گھوم سکتے ہیں۔اب فرض کریں آپکو شاپنگ سینٹر جانا ہے ۔اب آپ کار میں ہی برقعہ اُتار کر شاپنگ سینٹر میں داخل ہو نگے۔ آپ سوچیں گے یہ کیسی پابندی تو اسکا جواب ہے اسلام فوبیا ۔
یہ معاشرے اپنے آپکو سیکولر معاشرے کہتے ہیں انسانی حقوق و آزادی کے علم بردار کہلاتے ہیں ۔قُرآن جلائے جانے کو آزادی اظہار کا نام دیتے ہیں  حالانکہ اس اظہار سے نہ صرف دُنیاکے ڈھائی ارب مُسلمانوں کے دل دُکھی ہُوے بلکہ کئی لوگ اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے اور القاعدہ کے فلسفہ کو تقویت بھی پہنچائی ۔
 لیکن مسلم عورت کوبرقعہ پہننے کی آزادی نہیں ہے۔۔اِسی برقعہ کو زبردستی پہنانے پر آپ طالبان کو مسلم انتہا پسند کہتے ہیں آپکا زبردستی برقعہ اُتارنا وہ ہی طالبانی سوچ کا مظہر ہے۔ یہ بھی نان مسلم انتہا پسندی ہے ، یہ ایک ہی سکّے کے دو رخُ ہیں ۔   
اصل میں مغربی اور امریکی معاشروں نے تعلیم اورسائنس میں کافی ترقی کی ہے اب تثلیث کا فلسفہ اُنہیں مطمعین نہیں کر پارہا نتیجہ وہاں روحانی خلا پیدا ہوگیا ہے   ۔ جیسے ہمارے یہاں معجزوں یعنی یہ پڑھ لو ٹیم جیت جائے وہ پڑھ لو اِتنے گُناہ معاف ہوجائیں  گے وغیرہ کے کلچر نے ہم سے دُنیاوی ترقی چھین لی ہے  ۔ ہم میں مادی ترقی کا خلا پیدا ہوگیا ہے ۔  ان میں روحانی کا  ۔اب وہ  روحانیت  حاصل کرنے کے لیے کوئی بدھ مذہب سے روحانی سکون حاصل کرنا چاہتا ہے ، کوئی خوب نشہ کرکے روحانی سکون حاصل کرنا چاہتاہے تو کوئی موسیقی میں چیخ  پُکار میں پناہ ڈھوندتاہے۔لیکن ان سب میں کوئی مذہبی فلسفہ نہیں ہے۔ مُسلمانوں کا طریقہ عبادت اور فلسفہ  اُنہیں مُتاثر کر رہا ہے یہی وجہ ہےکہ اتنے سارے اسلام منفی پروپگنڈے ، اپنے خاندان ،برادری سے کٹ جانے کے خوف کے باوجود لوگ مسلمان ہورہے ہیں ٭جس سے بُنیاد پرست عیسائی خوف زدہ ہیں یہ  اسلام کے نظریہ ، طرز عبادت ،  ، برقعوں اور حجابوں سے خوف کھانے لگے ہیں ۔ چونکہ یہ ان معاشروں کی اقدار کی جڑوں  کوہلا رہے ہیں۔ 
 حالانکہ یہ تعلیم یافتہ لوگ ہیں  انہیں چاہئے تھا کہ تمام کلچروں کو بلا مداخلت آزادیسے قدرتی عمل سے گُذرنے دیتے تو اپنے آپ شکل  بنتی رہتی جیسے انڈیا میں ہورہا ۔  جتنا یہ مسلمانوں پر قدغن لگا کر انہیں آئی سولیٹ کریں گے اُتنا ہی القا عدہ جیسی تنظیموں کو فائدہ پہنچائیں گے جو کسی کےحق بھی میں اچھا نہ ہوگا ۔یہ بندشیں قُدرتی عمل میں مداخلت ہیں ۔ قُدرتی عمل میں مداخلت سزا کا موجب ہوتا ہے ۔ جیسے ہم نے غیر قُدرتی طریقہ سےجہاد کو پرموٹ کیا جسکی آج ہمیں  کڑی سزا مل رہی ہے ۔


( باقی آئندہ پوسٹ میں نئے عنوان کے تحت/ نئی معلومات لنک پر )۔

Friday, April 15, 2011

چسپ ۔۔۔۔ ترا شے۔۔۔۔۔ Dil۔۔۔۔۔

فکرستان سے پیش ہے پوسٹ ٹیگز: الاسکا / نمبر ۔1/ نیند /کنفیوز بوائے
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ 
اخبارات میں آئے دن دلچسپ خبریں چھپتی رہتی ہیں میں نے ان میں سے صرف تین  تراشے منتخب کئے ہیں ۔ پہلا تراشہ روزنامہ جنگ سے ہے جبکہ دوسرا اور تیسرا روزنامہ ایکسپریس سے منتخب کئے ہیں اب یہ آپ کے موڈ پر ہے کہ یہ آپ کو کتنے دلچسپ لگتے ہیں ۔۔۔۔۔۔
پہلا ترا شہ روز نامہ جنگ کا ہے ۔

کیا مردحضرات  اونچی ہیل پہن کر ایک میل چل سکتے ہیں  Posted ImagePosted ImagePosted Image
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
دوسرا تراشہ ایکسپریس نیوز کا ہے ۔


مُلک کا دِفاع ہونا چاہئے پڑھائی گئی چولہے بھاڑ میں / 21 ترقی پزیر ملکوں میں وکٹری پر ہیں۔E21.gif  E21.gif  E21.gif
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

تیسرا تراشہ ایکسپریس نیوز کا ہے۔( بُش کی وڈیو  یو ٹیوب  سے)۔ 

تقریر جب اتنی لمبی ہوگی تو نیند تو آئی گی نا ۔اب درج ذیل وڈیو میں دیکھیں بش کی لمبی تقریر نے معصوم بچّے کا کیسا حشر بنایا  کہ بیچارہ تالیاں بجانے میں بھی کنفیوز ہورہا ہے۔ آپ دیکھیں ایک منٹ کی وڈیو مُجھے دیں اجازت ۔
 ۔( ایم ۔ ڈی )۔


Wednesday, April 13, 2011

یہ کیسی انسانی سوچ ہے ؟ ؟ ؟٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 فکرستان سے پوسٹ ٹیگز: ٹارگٹ کلنگ/ صدام / قذافی / طالبان
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
ایک مذہبی سیاسی جماعت کے سربراہ نے کراچی میں ٹارگٹ کلنگ کو روکنے کے لیے جناب ذوالفقار مرزا کو وزیر داخلہ بنانے کا مُطالبہ کیا ہے یہ تو ایسی بات ہے جیسے اُنکے دور وزارت میں ٹارگٹ کلنگ نہیں ہوتی تھی ۔ اُنکی نظر میں وزیر داخلہ کے لیے کوئی دوسرا شخص کیوں نہیں آیا ؟ ؟ ؟ وجہ صاف ظاہر ہے مخالف کا مخالف ہمارا دوست ہے ۔رہا کراچی کا امن تو وہ جائے چولہے بھاڑ میں ہمیں تو مخالف کا مخالف عزیز ہے ۔ ہمیں متحدہ پسندنہیں ہے ۔
یہی انسانی سوچ نے کہا  صدام پسند نہیں ہے ۔چاہے کتنی ہی معصوم جانوں کا خون کرنا پڑے صدام کو ہٹا کے رہیں گے اس سوچ کا نتیجہ آج بھی وہاں معصوم جانوں کا خون بہہ رہا ہے۔ یہی سوچ  کہ قذافی پسند نہیں لہٰذا وہاں بھی معصوم جانوں کا خوں بہہ رہا ہے ۔ طالبان  پسند نہیں اس لیے معصوم جانوں کو خوں میں نہلا رہے ہیں ۔ 
 نوٹ: اس پوسٹ پر تبصرے بند ہیں ۔ وجہ یہ ہے کہ میں ایک سوچ کی بات کررہا ہوں سیاست کی نہیں کہ اس 21 ویں صدی میں بھی انسان کی خود غرضانہ سوچ میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے ۔انسان کب اِس سوچ سےچھُٹکارہ پائے گا ؟ ؟ ؟ 
۔( ایم ۔ ڈی )۔

Sunday, April 10, 2011

ایک محبّت ... زند گی چاہتی ہے ... دوسری موت ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


منجانب فکرستان پیش ہے پوسٹ ٹیگز: ارونا/ سوہن لال/ جنون/ پنکی/دو دُنیا /سابقہ پوسٹ
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
قُدرتی طور پر ایک لڑکی کے ذہن میں خاندان کا تصور لڑکے کے مُقابلے میں کافی اسٹرونگ ہوتا ہے ۔ جیسے جیسے وہ جوان ہوتی ہے اپنے ذاتی خاندان کے تانے بانے بُننے لگتی ہے ۔ارونا بھی یہی کچھ کر رہی تھی اُسکے خواب و خیال میں بھی نہیں تھا کہ اُسکے ساتھ ایسا واقعہ پیش آجائے گا ۔ وہ  معمول کے مُطابق اپنی ڈیوٹی انجام دے رہی تھی اُسے کیا معلوم تھا کہ کوئی اُسکی تاک میں لگا ہُوا ہے ۔ سوئپر سوہن لال کو ارونا کے جسم میں ایک خاص کشش محسوس ہوتی تھی ،کشش کے اِس جزبہ نے مذہب، قانون، اخلاقیات ان سب کا گلاگھو نٹ دیا اب وہ زنجیر سے ارونا کے گلے کو پوری طاقت سے دبانے لگا تاکہ ارونا آواز نہ نکال سکے ۔ وہ اس دباؤ سے بےدم سی ہوگئی تو سوہن لال  نےاپنے جزبات ٹھنڈے کیے اور بھاگ گیا لیکن بعد میں گرفتار ہُوا ،کورٹ  نے7 سال کی سزا سُنائی، دو منٹ کا جنون اُسکے لیے 7 سال کی قید لایا جبکہ دوسری زندگی تو اُس وقت سے زندہ درگور ہوگئی ۔ 37 سال سے وہ اُسی طرح نیم مردہ حالت میں زندگی اور موت کے درمیان پڑی ہوئی ہے۔ ارونا کی سہیلی پنکی کی مُحبت یہ برداشت نہ کرسکی اور  کورٹ سے درخواست کی کہ ارونا کو آسان موت دے دی جائے ۔
 ہاسپیٹل اسٹاف نرسوں کا پنکی سے شکوہ تھا کہ ارونا جس حال میں بھی ہے ، وہ ہےتو سہی ، 37 سال سے ہمارے درمیان ہے یہ ہماری روز مرّہ زندگی کا حصّہ ہے ،کبھی کبھی وہ چہرے سے تاثرات دیتی ہے تو ہم جی اُٹھتے ہیں ،ہم سب خوش ہوجاتے  ہیں یہ ایسی خوشی ہوتی ہے کہ جسکا مول دُنیا میں نہیں ، چونکہ وہ ہم میں سے تھی۔۔۔ یہ پنکی ہم سے یہ سب کُچھ کیوں چھیننا چاہتی ہے ۔۔۔ لیکن پنکی کا کہنا ہے کہ میں انکی مُحبت اور اتنے سالوں کی اِنکی خدمت کی قدر کرتی ہوں ۔ لیکن  میری محبت اروناکی تکلیف کو محسوس کر رہی ہے ۔چاہتی ہوں  کہ جتنی جلد ممکن ہوسکے ارونا اس تکلیف سے نجات پا جائے ۔چونکہ اُسکی روح دو دُنیاؤں کے درمیان لٹکی ہوئی ہے ۔
کورٹ کا فیصلہ نرسوں کی خواہش کے مُطابق آیا تو تمام نرسوں کے چہرے کھلِ اُٹھے ،مٹھایاں بانٹنے لگیں۔اِدھرپنکی کی محبت اُداس ہوگئی ۔۔ اب وہ ارونا کی زندگی پر کتاب لکھے گی ۔۔۔مزید تفصیل کے خواہش مند درج ذیل لنک پر جائیں ۔ 
نوٹ : میں نے سابقہ پوسٹ میں جو بات کہنی چاہی تھی اُسی سے ملتی جلتی بات کو آج جاوید چوہدری نے بُہت  ہی اچّھے انداز میں لکھا ہے ۔ جو ذیل لنک پر ہے ۔
http://www.express.com.pk/epaper/PoPupwindow.aspx?newsID=1101213424&Issue=NP_LHE&Date=20110410
خلوص کا طالب۔(ایم ۔ ڈی )۔

Friday, April 8, 2011

درسِ قُرآن اور سپر بگس ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

فکرستان سے پیش ہے پوسٹ ٹیگز: ممتاز قادری/ علامہ اقبال / جرسومہ/سُپر مُسلمان /نوع
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
آجکل گھروں کے دروازوں میں جو پمفلٹ اٹکائے جارہے ہیں ان میں ایسے پمفلٹوں کی تعداد زیادہ ہوگئی ہے کہ اتوار کے دن فلاں شادی حال میں فلاں سابقے لاحقے کے حامل مولانا  درس قُرآن دیں گے ۔ پردے کا خاص انتظام ہے۔ ماشااللہ سے خواتین کی بھی ایک اچھی خاصی تعداد ان درسوں میں شرکت کرتی ہے ۔ یہ درس کتنے کامیاب جارہے ہیں اسکی ایک جھلک ممتاز قادری واقعہ پر مذہبی ٹمپریچر نے آپکو دکھادی ۔ اس جھلک میں روزافزوں اضافہ ہورہا ہے ۔ مُجھے صرف ایک بار ہی درس میں جانے کی سعادت حاصل ہوئی دوبارہ کبھی نہ جانے کی ٹھان لی ۔ پمفلٹ پر درس قُران لکھا ہوتا ہےشُروع بھی قُرانی آیت سے کرتے ہیں ۔اسکے بعدپورے درس میں زورِبیان/ حدیثیں بیان ہوتا ہے ان درسوں میں والدین کو یہ خوشخبری بھی دی جاتی ہے کہ آپکا بچّہ قُران حفظ کرلیگا تو آپکی بخشش ہوجائے گی ۔ یہ بھی بتایا جاتا ہے کہ حفظ کرنے کے بعد بھولنا بُہت بڑا گُناہ ہے۔ یعنی مدرسوں سے فارغ التحصیل طُلبا کیلئے مستقل روزی روٹی کا بدوبست کیا جاتا ہے کہ پوش علاقوں میں 10 سے15منٹ سُننے کا اچھا خاصا مُشاہراہ لیتے ہیں ۔
 درس ، دُعائیں ، تسبیحیں ، کاؤنٹرز اتناسب کرنے کے بعد بھی ہم  پوری دُنیا میں پِٹ رہے ہیں ۔ذلیل و خوار ہورہے ہیں ۔ علامہ اقبال دور میں ہم اتنے بھی ذلیل خوار نہیں تھے لیکن پھر بھی علامہ چیخ اُٹھے شکوہ کربیٹھے ، عُلما نے فتوے صادر کردیے چونکہ عُلما علامہ کے اُس دُکھ سے نہ واقف تھے جو اُنکو مسلمانوں کی حالت دیکھ کر ہوتا تھا عُلما آج بھی اُس دُکھ سے نہ واقف ہیں جوایک مسلمان مسلمانوں کی حالت  زار پر محسوس کرتا ہےچونکہ اُنکی ساری توانائیاں اپنے مسلک کی افضلیت ثابت کرنے پر  صرف ہوتی ہیں ۔  ہمیں غور  کرنا چاہیئے کہ ترقی کی اس دوڑ میں کہیں ایسا تو نہیں ہے کہ ہمارے عُلما ہمیں نزولی سمت میں دوڑا رہے ہوں ۔جس طرح ہمارے  سیاسی رہنما مُلک کو نزولی سمت دوڑا رہے ہیں۔ اس لیے کہ معمولی خورد بینی جرسُومہ نے پٹِنے کے بعد قانونِ قُدرت کو اپناتے ہوئے صحیح سمت جدوجہد کرکے اینٹی بایوٹیکس کو شکست دینے کیلئے سُپر بگس بن گیا ۔ اِسطرح یہ ننھا سا جرسومہ ہمیں دعوتِ فکر دے رہا ہے  کہ ہم غور و فکر کرنے والے بنیں ۔قانونِ قُدرت کی صحیح  سمت کو پہچانیں اور  اُس سمت جدو جہد کریں تاکہ ہم بھی سُپر مسلمان بن جائیں۔یا پھر ہم ہاتھ اُٹھا کر کہہ دیں کہ ہم چھوٹے سے جرسومہ سے بھی گئی گزری" نوع" بن گئے ہیں ۔ 
آپکے خلوص کا طالب ۔(ایم ۔ ڈی )۔

Wednesday, April 6, 2011

الزبتھ ٹیلر نے رچرڈ سے دوبار شادی کیوں کی ؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟

فکرستان سے پوسٹ ٹیگز : منگنی /  وقت/ شرط/طلاق/وعدہ / 23 مارچ
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
کہا جاتا ہے کہ چیل کے بچّے اُس وقت تک اپنی آنکھیں نہیں کھولتے ہیں جب تک کہ اُنہیں کوئی چمکیلی چیز نہ دِکھائی جائے ۔اسی طرح سے ٹیلر کو پیدا ہوئے ایک دو نہیں پورے آٹھ دن ہوگئے لیکن اُسنے ابھی تک اپنی آنکھیں نہیں کھولی تھیں  والدین  پریشانی میں مبتلا تھے اِسکے باوجود اُسکا رشتہ آگیا تھا اور رسمی طور پرمنگنی کی انگوٹھی بھی آگئی تھی ٹیلر کی والدہ نے مُحبت سے پُچکارتے ہوئے کہا اِدھر دیکھو۔۔۔ دیکھو یہ کیا ہے۔۔۔ تُمہارے لیے منگنی کی انگوٹھی آگئی ہے ۔ٹیلر نے فوراً اپنی  آنکھیں کھول دیں ، اور سب ہنس پڑے ،جبکہ ماں کی مامتا چھلک پڑی یہ منظر ٹیلر کو اُسکی ماں نے بتایا اب وہ دوسروں کوبتاتی تھی۔ 
الزبتھ ٹیلر نے رچرڈ برٹن سے دو بار شادی کی ۔
فوٹو فلم قلوپطرہ
 ۔الزبتھ ٹیلر اور رچرڈ کی مُحبت فلم قلوپطرہ کے دوران پروان چڑھی اور دونوں نے شادی کرلی یہ شادی بڑی خوش اسلوبی سے وقت کی منزیلیں طے کر رہی تھی لیکن جیسا کے سب لوگ جانتے ہیں کہ وقت کو پائیداری سے سخت نفرت ہے، اُسکو کسی چیز کی پائیداری  قبول نہیں وہ بھلا ٹیلر اور رچرڈ کی مُحبت کی پائیداری کو کیسے قبول کرتا  ٹیلر نے وقت کی اس تبدیلی کو بھانپ لیا اور اُسنے رچرڈ سے کہا وقت ہمارے درمیان سرد مہری کو بڑھاتا جارہا ہے ۔اس سے پہلے کہ وقت ہمارے درمیان سردمہر ی کو تلخی میں بدل دے اور ہمارے درمیان ہمیشہ کی جُدائی ڈال دے کیوں نا ہم اپنی مُحبت کو برقرار رکھنے اور وقت کو ذرا شانت کرنے کیلئے چند دنوں کی عارضی جُدائی کو اپنا لیں اور اِس شرط کے ساتھ ہم طلاق لیں کہ ہم دوبارہ شادی کریں گے رچرڈ کُچھ پس وپیش کے بعد تیار ہوگئے۔ یوں یہ جوڑا وقت کے وار کو ٹالنے میں کامیاب ہُوا اور اپنے وعدوں کو نبھاتے ہُوئے کچھ عرصے بعد دوبارہ شادی کرلی ۔
  79 سالہ الزبیتھ ٹیلر کا  32 مارچ 2011 کو بُلاوا آگیا اور وہ اس دُنیا کو ہمیشہ کیلئے چھوڑ کر چلی گئیں۔ سچ ہے یہ دُنیا عارضی ٹِھکانا ہے جو آیا ہے ،اُسنے جا نا ہے۔ ذیل کی وڈیو کے پُر فِکر بولوں سے مُلاقات کریں ۔مُجھے دیں اجازت ۔  
آپکے خلوص کا طالب ۔(ایم ۔ ڈی )۔

Sunday, April 3, 2011

تہذیب یافتہ انسانوں کی جھلک ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭


فکرستان سے پیش ہے پوسٹ ٹیگز: پینٹاگون/ میگزین/ ٹرافی/
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
کیا موجودہ انسان اپنے آپکو ترقی یافتہ انسان کہہ سکتا ہے ۔ اُسنے کیا ترقی کی ہے ۔ مادی ترقی کو مادی ترقی کہنا چاہئے نہ کہ انسانی ترقی لیکن ہم کہتے ہیں کہ انسان ترقی کررہا ہے۔ بلکہ ہم اپنے آباؤ اجداد کو وحشی انسان قرار دیتے ہیں اور اپنے آپکو تہذیب یافتہ انسان قرار دےکر خوشی حاصل کرتے ہی ۔آئیں ملاقات کریں دُنیا کی سب سے زیادہ ترقی یافتہ، تعلیم یافتہ ، مہذب ، انسانی حقوق کی علمبردار قوم کے چند انسانوں سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


واشنگٹن (ثناء نیوز ) پینٹاگون نے افغانستان میں امریکی فوجیوں کی جانب سے عام شہریوں کے ساتھ غیر انسانی سلوک کے لرزہ خیزانکشافات کے بعد معافی مانگ لی ۔ ایک امریکی میگزین میں امریکی فوجیوں کی جانب سے ڈیتھ اسکواڈ کی تشکیل اور ان کے ہاتھوں نہتے افغان شہریوں کے سفاکانہ قتل کی لرزہ خیز داستان کی اشاعت نے پینٹاگون کو شرمندگی سے دوچار کر دیا ہے ۔ میگزین میں انکشاف کیا گیا ہے کہ کس طرح امریکی فوجیوں نے ایک 15 سالہ لڑکے کی انگلیاں کاٹ دیں اور انہیں بطور ٹرافی محفوظ کر لیا جبکہ مختلف افغان شہریوں کو ہلاک کرنے کے بعد ان کے جسمانی اعضاء بطور ٹرافی محفوظ کرنے جیسی شرمناک حرکات کی گئیں۔ فوجی حکام کے مطابق افغان شہریوں کے ساتھ ہونے والے غیر انسانی سلوک کی تصاویر کی اشاعت نے ان کی ساکھ کو شدید دھچکا پہنچایا ہے اور انہیں جھنجھوڑ کر رکھ دیا ہے ۔
 درج بالا تراشہ روز نامہ جنگ 3 اپریل 2011 کا ہے ۔
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
خلوص کا طالب( ایم ۔ ڈی )۔




Friday, April 1, 2011

تسبیحیں اور کاؤنٹرز ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

فکرستان سے پوسٹ ٹیگز: نان مسلم دُنیا/قُرآن/دُعا/علت ومعلول/اچُھوت/نئی نسل/عُلما
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
کرکٹ میچ نےقوم میں موجود سارے تعصبات، ساری فرقہ بندیاں ، ایک دن کے لیے ختم کردیے ،یہاں تک کہ غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گُذارنے والے کروڑوں لوگوں نے بھی ایک دن کے لیے اپنے دُکھوں کو بُھلادیا غرض کہ پوری قوم نے ایک دن کے لیے اپنے سارے مسائل سے فراریت حاصل کی ۔  سب کی زبان پر ایک ہی جملہ تھا کہ "پا کستان جیت جائے"  نہ صرف نماز میں جیت کے لیے دُعائیں مانگیں گئیں بلکہ جیت کے لیے خصوصی دُعاؤں کا اہتمام بھی کیا گیا یہاں تک کہ ٹی وی چینلز نے بھی دُعاؤں کے اسپشلسٹوں کو بُلاکر پوری قوم سے اجتماعی دُعائیں کرائیں ۔  بعض چینلز ایسے الفاظ بھی مُہیا  کر رہے تھے کہ جس کے ورد  سے ٹیم فتح سے ہمکنار ہوگی۔قوم نے تسبیحیں ، کاؤنٹرز سنبھال لیے ۔
عُلما نے مسلمان قوم کودُعاؤں کےسحر میں مبتلا کرکے ناکارہ بنادیا ہے ۔نان مسلم دُنیا  قُرانی آیات  پر عمل کرتے ہوئے سائنس اور ٹیکنا لوجی  کے ماہر پیدا کر رہی ہے اِدھر ہم عُلما کی مہربانی سے دُعاؤں اور نعتوں کے اسپشلسٹ پیدا کررہے ہیں اور اِسکول پر اِسکول تباہ کر رہے ہیں۔
 ہر جگہ نان مسلم مسلمانوں کو مار رہے ہیں عراق میں  مسلمانوں کو مارا ہے  ،افغانستان میں مسلمانوں کو مار رہے ہیں، پاکستان میں مُسلمانوں کو مار رہے ہیں، فلسطین میں مسلمانوں کو مار رہے ہیں، کشمیر میں مسلمانوں کو مار رہے ہیں ۔ لیبیا میں مسلمانوں کو مار رہے ہیں ۔ بحرین میں بالواسطہ مسلمانوں کو مار رہے ہیں ۔  اور ہم پر دہشت گرد کا لیبل بھی چپکا دیا گیا ہے۔آج دُنیا کی قومیں ہم سے اچُھوتوں جیسا سلوک کر رہی ہیں ،علما نہیں جانتے کہ اقلیت میں موجود ممالک میں مسلمانوں کی  نئی نسل کس عذاب سے گُذر رہی ہے ۔ ائیرپورٹوں پر ہماری ہماری خصوصی تلاشی ہوتی ہے، اسطرح ہم پوری دُنیا میں اتنے ذلیل خُوار ہو گئے ہیں  کہ  رُونے کو جی چاہتا ہے۔
 ہم اس حال میں عُلما کے طُفیل پہُنچے ہیں اِنہوں نےہماری ذہنی صلاحیت کو دوسری جانب فوکس کردیاہے یعنی داڑھی اتنی بڑی ، اتنی چھوٹی رکھنا ہے،  پانی ایسے پینا ہے، غُسل ایسے کرنا ہے ،وضو ایسے کرنا ہے  ۔ باہر سے آؤ تو گھر میں پہلے کونسا پاؤں داخل کرنا ہے ، ان باریکیوں کا یہ نتیجہ نکلا کہ اُمّت نیرو مائنڈ بن گئی اسکے علاوہ یہ اتنی بار پڑھو ٹیم جیت جائے گی،یہ اتنی بار پڑھو نوکری مل جائے گی ،۔یہ اتنی بار پڑھو امتحان میں کامیابی مل جائے گی۔ کاروبار نہ چل رہا ہوتو یہ ورد  گھر میں ختم کراؤ   کاروبار چل پڑے گا۔غرض کہ اِس درس نے امّت  کی ذہنی صلاحیت  کو  کافی نقصان پہنچا یا۔ کاش اِن چکروں میں پڑنے کے بجائے اصل کتاب قُرآن کو سمجھنے کی کوشش کرتے ۔
 قُران کے مُطابق اللہ نے تمام کائنات میں علت و معلول کا قانون رکھ دیا ہے قُرآن کا دعویٰ ہے کہ پوری کائنات میں گھوم پھر کے کے دیکھ لو اس قانون میں کہیں فرق نہ پاؤ گے تسبیحوں اور کاؤنٹر کے زریعے قانون قُدرت نہیں بدلے جاسکتے ہیں۔ 
 آپﷺ نے اِسلام کو پھیلانے میں کیسی کیسی تکلیفیں اُٹھائیں ہیں یہ سب جانتے ہیں ، آپ ﷺ چاہتے تو دُعاؤں کے زریعے سب کے قُلوب تبدیل ہوجاتے ، مگر آپﷺ نے اُمّت کو بتانا تھا کہ مقصد کو حاصل کرنے  کاقانون یہ ہے کہ ایسی جدوجہد کرو جیسی  میں کررہا ہوں آج بھی آپ ﷺ کی اِس یکسو محنت اور جدوجہد کو نان مسلم بھی  مانتے  ہیں۔لیکن ہمارے عُلما نے اُمّت  کو سُنتِ محمؐدی کی محنت و جدوجہد کا درس دینے کے بجائے امّت  کے ہاتھ میں تسبیحیں اور کاؤنٹرز دے دیئے ۔کہ یہ اتنی بار پڑھو اتنے گُناہ معاف، یہ اتنی بار پڑھو اتنا ثواب ۔ اس مسئلہ کیلئے یہ اتنی بار پڑھو مسئلہ حل ہوجائے گا، یہ ورد کرو ٹیم جیت جائے گی غرض کہ ہر مسئلہ کیلئے کوئی نہ کوئی ورد یا دُعا موجود ہے۔
 ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
نوٹ: میں دُعاؤں کا مُخالف نہیں  ہوں میں اُن تصورات کا مُخالف ہوں جو کہ عُلما ئے کرام نے دُعاؤں کے ساتھ وابستہ کردیے ہیں۔ جس سے مسلم اُمّہ نیرو مائنڈ ہوگئی ہے۔ اس پوسٹ میں یہی بات کہنے کی کوشش  کی ہے ۔ چونکہ آج بھی ایسی کھیپ کی کھیپ تیار ہورہی ہے کہ جو مسجدوں میں آکر اعلیٰ تعلیم یافتہ لوگوں میں بھی مذہب کے نام پر اپنا چشمہ چڑھا رہی ہے۔
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
خلوص کا طالب( ایم ۔ ڈی) ۔