Image result for monument valley
ہر چیز سے عیاں ہے،ہرشے میں نہاں ہے،خالِق کائنات، مالِک کائنات
عقلِ کُل،توانائی کُل، ہمہ جہت، ہمہ صِفت،خالِق کائنات، مالِک کائنات
آنکھیں کہ جِن سے میں دیکھا ہوں میری نہیں، عطائے خُداوندی ہے
  پاؤں کہ جِن سے میں چل تا ہوں میرے نہیں،عطائے خُدا وندی ہے
غرض یہ کہ میرے  وجود کا ذرہ  ذرہ   میرا  نہیں ،عطائے خُداوندی ہے
میرے خالِق میرے مالکِ میرے پروردگارانِ نعمتوں کا بے انتہا شُکریہ  


Wednesday, December 2, 2015

" رب کا شُکرانہ ٪99 کمپنی شیئرز کا عطیہ"

فکرستان کی شئیرنگ : برائے  غوروفکر  کیلئے

Mark Zuckerberg, his wife Priscilla and their baby girl called Max
بانیِ فیس بک و اہلیہ نے خالقِ  کائنات کے"عطیہ"
پراپنے٪99 کمپنی شئیرز کا "عطیہ" دیا
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
  روز نامہ  دُنیا


Monday, November 30, 2015

فکرستان کی شئیرنگ :30/11/2015

فکرستان  کی شئیرنگ:برائے  غوروفکر  کیلئے
  روز نامہ  دُنیا

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
"  دل  کا  بھروسہ "
http://universe-zeeno.blogspot.com/2015/11/blog-post_12.html

Thursday, November 12, 2015

" دل کا بھروسہ "

منجانب  فکرستان
چشمے  کیلئے ایک  واقف  کار  دکان  دار  کے  ہاں  جانا  ہوا،  دوران  گفتگو  اُنہوں  نے  کہا  کہ  وہقُربانی  کرنے  کے  بجائے  جانور  کی  رقم  فلاحی  ادارے  کو  دیتے  ہیں،اداکارہ   ثمینہ پیرزادہ قُربانی نہیں کرتیں ،لیکن اُنکے خیال میں سنّت  ابراہمیؑ  کی  اداگئی  کیلئے   وہ  جس طریقے  پر  عمل  پیرا ہیں وہ  قُربانی  کے  اصل  مقصدومفہوم  سے  قریب  تر  ہے ٭۔۔ اسی قُربانی  کو  حوالہ  بنا  کر  اپنے مذہبی خیالات آپ سے  شئیر   کرنا  ہے۔ ۔
 مذہب  کی بنیاد اُس  دن  پڑ گئی  تھی  جب  خُدا  نے  آدمؑ  سے  کہا  تھا  کہ  دیکھو  اُس  درخت  کے  قریب نہ  جانا  ۔۔۔ اور شیطان نے آدمؑ  سے کہا  اِس  درخت  کا  پھل  کھاؤ  گےتو   ابدی زندگی   اور   لازوال  سلطنت  پاؤ  گے(یہ  چیزیں  آج  بھی انسان  کے  لئے  کشش  کا  باعث  ہیں) آدمؑ  شیطان  کے  بہکاوے  میں  آگئے ۔۔۔ نتیجے  میں جنّت سے  نِکل نا  پڑا  تو جہاں   خُدا  کے  کہے پر  یقین کر نے  اہمیت  واضع  ہوئی  وہیں  یہ بھی  کہ  کبھی  بھی  شیطان  یا عقل  کے  بہکاوے  میں  نہیں آنا  ہے ۔۔
 مذاہب آسمانی  ہوں  کہ  غیر  آسمانی  بانیان سب سے  پہلے  اپنے  قول  و  فعل  سے  اپنے  آپ کو  سچّا  ثابت  کرتے  ہیں، پھر  عقیدوں  پر  مشتمل  دُنیا  اور آخرت کے  بارے  میں  مذہبی  تعلیم  دیتے  ہیں   اور غلط  راستوں  سے  خبردار  کرتے  ہیں ( جس  طرح  خُدا  نے  آدمؑ  کو  خبردا کیا  تھا  کہ  اُس  درخت  کے  قریب  نہ جانا ) لیکن  جیسے  ہی  بانیانِ  مذہب  اپنے  پیروکاروں  کے  درمیان  سے  اُٹھ  جاتے  ہیں تو  اسی  مذہب  کے  چند  عُلما  مذہب  میں عقلی دلیل ، حجت  اور  خطابت  کے زور پر مذہب  کو  فرقوں  میں  بانٹ  دیتے  ہیں ، گُناہ  ثواب  کے اپنے  پیمانے  ایجاد کرتے  ہیں،  جیسے  گوشت  کھانے  والے  کو مارنا  ثواب  ہے۔  یوں  یہ فرقے  پُر  امن  مذہب  کو  پُر تشدد  اور  خوُنی  بنا دیتے  ہیں،  ہر  مذہب  میں  جتنے  بھی  فرقے  بنتے  ہیں  وہ  صرف اور صرف  عقلی دلیل  اور  حجت  کی  بنیاد پر  بنتے  ہیں۔۔۔  یہ بات اِس  مثال  سے صاف  ہوگی :مثلاً  ایک فرقہ  عقلی  دلیل پر یہ  کہتا ہے کہ : ایک   شہنشاہ  نے بنواکے  حسیں تاج محل ساری  دُنیا  کو  محبت  کی  نِشانی  دی  ہے۔۔  دوسرا  فرقہ اسی  عقلی  دلیل  کو استعمال  کرتے  ہوئے کہے گا  کہ: اِک  شہنشاہ  نے  دولت  کا  سہارا  لے  کر  ہم غریبوں  کی  محبت  کا  اُڑا  یا  ہے  مذاق ۔۔۔اسطرح  یہ  دو  فرقے  بن گئے  دونوں  طرف  کے  پُر جوش عُلما  اپنی  دھاک بِٹھانے  کیلئے  ایک  دوسرے کے  خلاف  ایسی ایسی  مذہبی  دلیلیں تراشیں  گیں  کہ  جزا سزا  کیلئے  خُدائی  فیصلے کا قِیامت    تک کا  انتطار  کون  کرے، دونوں  فرقے  خود ہی  ایک  دوسرے  کو  جہنمی  قرار  دے  لیں گے۔۔۔
 مذہب میں  فرقہ پرستی منع  ہے۔۔ مذہب  نام  ہے  یقین  پرستی  کا  ۔۔مثلاً  تثلیت  کا عقیدہ  (خُدا: بیٹا: روح القدس)    یہ عقیدہ  کسی  غیر عیسائی  کو  کتنا  ہی مہمل  محسوس  ہو ۔۔  جو بچہ  عیسائی  گھرانے  میں پیدا ہوگا  وہ  تثلیت  پر یقین  رکھے  گا ،موجودہ  دُنیا میں  اسی  عقیدے  کے  پیرو  کار سب  سے  زیادہ ہیں  اور یہ  بھی کہ تعلیم  یافتہ  بھی  زیادہ  ہیں۔۔ اسلئے  اِنہوں نے  اپنے  عقیدے(  تثلیت )  کو  عقلی  بنانے کیلئے  مختلف  قسِم  کے  کئی  فارمولے  وضع  کئے۔۔  لیکن  عقیدہ  تثلیت  ہے کہ  بدستور  انکا  منہ  چڑا رہا ہے  اور  کہہ  رہا  ہے  اے  عقل  کے  مارو   مذہبی عقیدوں   پر  صرف  یقین  کیا  جا  سکتا  ہے  انہیں  ثابت  نہیں  کیا  جا سکتا ہے۔۔  چونکہ  اِنکا  تعلق  عقل  کے  بجائے  دل  سے  ہوتا ہے۔۔  لغت  میں عقیدہ کے معنی ہیں" دل کا بھروسہ"  دل  کے بھروسے کو  عقل  سے ثابت  نہیں  کیا جا سکتا  ہے ، اِس  پر صرف  یقین  کیا  جاتا ہے یعنی  بانیِ مذہب  نے جو کچُھ کہا اُس  کہے کا  بھروسہ  دل  میں  راسخ  ہونے  کا  نام ایمان ہے اور اس پر  من وعن عمل  کرنے کا نام مذہب ہے۔۔۔مثلاً  جین  مت کے گرو نے  کہا  کہمردوں  کے سر  پر  بال نہیں  رہنا  چاہئے ۔۔اسی لئے  عملاً  جینی کُھلے  سر  گنجے رہتے ہیں ۔۔۔

 (جین مت کے پیروکاروں میں شرح خواندگی (94.1)  فیصد ہے)۔
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
 جبکہ سکھ مت کے  گرو  نے کہا  کہ جسم کے کسی  بھی  حصّے  کے بال نہ کاٹے  جائیں ۔۔ اور مردوں کیلئے  یہ ہدایت بھی ہے کہ  وہ  انِ بالوں کو باندھ کر پگڑی  میں رکھیں اور یہ بھی کہ پگڑی  لوگوں کے سامنے  نہ اُتاریں ۔۔ سکھ مت  کے پیروکار بھی  گرو  کی  کہی انِ  باتوں پر عمل کرتے ہیں ۔۔۔


سکھ مت کی  پیروکار لیڈی ٹیچر"ہرنام کور" کے چہرے  پر بال  ہیں،لیکن

  گرو  کا کہنا ہے کہ بال نہیں  کا ٹنا ہے، ہرنام کور گرو  کے کہے  پر عمل کررہی ہے۔ 

________________________________________________________________________
 اسِ  ساری  آگاہی  کا  مقصد  یہ ہے کہ  ہمیں بھی آپﷺ کی تعلیمات پر من و عن  عمل کرنا چاہے ۔۔عقیدوں میں عقل کو نہیں  گھسانا چاہے  کہ  قُربانی  کرنے  کے  بجائے  جانور  کی  رقم  کسی  فلاحی  ادارے  کو دیکر کہو کہ سنّت  ابراہمیؑ  ادا  ہوگئی  یہ  لوگوں  کی  بھول  ہے  ۔۔جیسے  اُوپر  کہا  گیا  ہے کہ  مذہبی  عقیدوں  میں  عقل  کو  داخل  کرنے سے۔۔۔ سوائے  نیا  فرقہ ہاتھ آنے کے۔۔ کچُھ ہاتھ نہ آئے گا۔۔  
اب  مُجھے  اجازت  :  ہمیشہ رب کی  مہربانیاں  رہیں
نوٹ:پوسٹ میں کہی گئی باتوں سے اختلاف / اتفاق کرنا آپ کا حق ہے
٭ http://magazine.jang.com.pk/detail_article.asp?id=29110

Friday, September 25, 2015

"مِنجانب فِکرستان"


 "مِنجانب فِکرستان" 
Image result for eid mubarak fb cover

Saturday, September 12, 2015

"تکمیل کے لئے"

منجانب فکرستان:جوڑے کا جواب،غوروفکرکیلئے
 جزیشن گیپ کی حقیقت دواور دو چار جیسی نہیں۔۔۔ورنہ ایک چوبیس سالہ خوبرو جوان لڑکی چوراسی سالہ بوڑھے شخص کو بھرپُورقِسم کی عشقیہ شاعری والے لو لیٹر کبھی نہ لکھتی اور نہ ہی چوراسی سالہ بوڑھے شخص سے شادی کرتی۔۔۔تصاویر میں دُلہن کی خُوشی دیدنی ہے ۔۔ 
یہذِکرخیر ہو رہا ہے روس کے لیجنڈ اداکار جناب آئیوان کی شادی کا ۔۔
تاہم نوبیاہتا جوڑے کو روس کی میڈیا کی تنقید کا سامنا کر نا پڑا،جسکے جواب میں جوڑے نے میڈیا والوں کو یہ جواب دیا کہ"ان کا رشتہ تو جنت میں ہی طے پا گیا تھا۔ہم  تو بس اُسی رشتے کی تکمیل کے سلسلے میں دنیا میں آئے ہیں،اور یہ بھی کہ ہم اولاد کی خُواہش رکھتے ہیں"۔
شادی کی تصاویر اور تفصیل کے لئے لنک پر جائیں اور مُجھے اجازت دیں۔۔
http://hotmodelphotos.com/84-year-old-russian-actor-marries-his-24-year-old-fiancee-and-plan-on-starting-a-family/
نوٹ:پوسٹ میں کہی گئی باتوں سے اختلاف / اتفاق کرنا آپ کا حق ہے
          {ہمیشہ رب کی مہربانیاں رہیں }

Friday, September 11, 2015

"فلسفی کا اعتراف "

منجانب فکرستان:غوروفکرکیلئے
 کل 10ستمبر کوخُودکشیوں کی روک تھام کا عالمی دن  منایا گیا ، اور آج پانچ افراد کی خُودکشی کی خبر پڑھنے کو ملی۔۔۔
 ایک شخص مشہورفلسفی ول ڈیورانٹ کے قریب آیا اور کہا میں خودکشی کرنے والاہوں۔۔تاہم اگرآپ نے زندگی کیلئے معقول دلیل دی، تو اس اقدام سے باز رہوں گا ۔۔
ول ڈیورانٹ کو ایسے خطوط  ملتے رہتے تھے کہ جِن میں خودکشی کرلینےکی خواہش یا دہمکی ہوتی، ایک سال تو ایسے خطوط کی تعداد 284 ہوگئی جنہوں نے حساس فلسفی  کو  ہلاکر رکھ دیا  ،(جیسے تین سالہ ایلان کی تصویر نے یورپ کو ہلاکر رکھ دیا )۔۔فلسفی کے دل میں  یہ خیال پیدا ہُوا کہ اس بارے میں کیوں نہ دُنیا کے Genius لوگوں سے رابطہ کروں اور اُن کی رائے معلوم کروں، چُنانچہ اُنہوں نے 100 افرادکو خُطوط لکھے۔۔
 تاہم اُنہوں نے اس بات کا اعتراف کیا کہ خودکشی کیوں؟؟ کا وہ جواب نہیں دے سکتے ہیں اُنکا کہنا ہے کہ " جب سے میرا مذہب پر اعتقاد ختم ہُوا ہے میں اس مسئلے پر گہری سوچ بچار کرتا رہا ہوں اور اس دوران مجھ پر نااُمیدی کی وہی کیفیت طاری ہوتی ہے جس کا اظہار فرانسیسی اور جرمن وجودیوں نے بھی کیا ہے"۔۔۔۔
( گویااس بات کااعتراف ہے کہ زندگی میں معنی صرف مذہب سے ہی ہے)۔۔
یعنی عقیدہ،یعنی یقین 
"On the meaning of life"سے ماخوذ 
نوٹ:پوسٹ میں کہی گئی باتوں سے اختلاف / اتفاق کرنا آپ کا حق ہے
          {ہمیشہ رب کی مہربانیاں رہیں }


Tuesday, September 8, 2015

" جواب "

منجانب فکرستان:غوروفکرکیلئے
ہر قِسم کے میڈیا نے !!!
 دلائل دینے کے فن میں ہمیں اتنا ماہر بنادیا ہے کہ اگر شیطان کی حمایت میں دلائل دینے پرآئیں تو سامنے والے کا ایمان ڈول جائے۔۔۔
سیاسی رہنما ہو کہ مذہبی دلائل ان کے آگے پیچھے پھرتے رہتے ہیں کہ نہ جانے کب قومی مفاد یا اسلامی مفاد میں انکی ضرورت پیش آجائے۔
میڈیا نے ایسے دانشوربھی پیدا کئے ہیں جو اپنےدلائل کے زور پر  شمُال کی بحث کو جنوب  کی بنا دیتے ہیں۔۔۔ 
یہ تمہید اس لئے باندھی ہے کہ دوست سے دوران گفتگو پوچھا کہ کیا  وجہ ہے ۔۔۔کہ یورپ تو  بڑی تعداد میں  پناہ گزینوں کو قبول کر رہا اِن  میں جرمنی پیش پیش ہے 8 لاکھ پناہ گزینوں کو لے رہا ہے لیکن تنظیم تعاون اسلامی  اور  57 اسلامی ممالک خاموش ہیں ۔۔۔ایسا کیوں ہے ؟؟؟ دوست کا جواب ایسا تھا  کہ گویا لکڑی توڑ کر ہاتھ میں دیدیا ہو۔۔
   دوست کا جواب تھا کہ یہ سب یورپ اور امریکہ کے کیئے کا نتیجہ ہے تو پِھر دوسرا کیوں اِن پناہ گزینوں کا بوجھ اُٹھا ئے ۔۔۔  
نوٹ:پوسٹ میں کہی گئی باتوں سے اختلاف / اتفاق کرنا آپ کا حق ہے
          {ہمیشہ رب کی مہربانیاں رہیں }

Saturday, September 5, 2015

" عام موت کو خاص۔۔۔۔۔ "

منجانب فکرستان : روح؛پاکیزگی ؛ خون ،عیسائیت،سکھ مت
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
پیدائش،موت،اور خواب انسانی ذہن  کیلئے ہمیشہ سےبھیدرہے ہیں،یہ آج بھی پُراسرار ہیں اِنکی اِسی پُراسرایت کو محور  بنا کر ابتدائی انسانی ذہنوں نے مذہبی عبادتی عقیدے تراشے  اور رسُوم  کو رواج دیا ۔ماہرینِ نفسیات کا کہنا ہے کہ یہ انسانی ذہنوں میں اجتماعی لاشعور  کے طور پر موجود ہیں۔۔ 
جب ہم مذہبی عقیدوں و رسُوم کا تجزیاتی مطالعہ  کرتے ہیں تو ہم دیکھ تے ہیں کہ ایک کے مذہبی عقیدے  و رسُوم  دیگر مذاہب میں بھی (  فرق کے ساتھ) پائے جاتے ہیں۔۔مثلاً روزے رکھنے کا عقیدہ اکثر مذاہب میں (فرق کے ساتھ) پایا جاتا  جین مت والوں میں تو روزہ براہراست روح سے جُڑا ہوا ہے،  یعنی کسی جین متی کو لا علاج بیماری لگ جائے ، ضعیفی روگ ہو جائے یا اِس دُنیا سے دل بھر جائے تو بھی وہ جسم سے روح نکلنے تک کا (تا دم مرگ) کا روزہ رکھ لیتا ہے، گویا روح کی  دُوسری دُنیا میں منتقلی ہوتے سمے جسم سےنکلتی روح میں پاکیز گی کا عنصرشامل کرتا ہے، یوں مرنے والا  اپنی عام موت کو خاص بناتا ہے۔۔
 ایسی روحانیت  حامل رسم پر بھارتی ریاست راجستھان ہائی کورٹ نے خودکشی  قرار دیتے ہوئے اس رسم پر پابندی عائدکردی تھی،جبکہ اِسی رسم سے ملتی جلتی رسم  ہندومت  میں بھی رائج ہے جسے "پریوپراویشا" کی رسم کہتے ہیں ۔۔۔اسی طرح عیسائیوں میں بھی ہر سال  گڈفرائی ڈے پر مصلوب  ہونے کی رسم موجود ہے۔۔ 
کیا ہائی کورٹ کے جج کو نہیں معلوم کہ " مذہبی معاملات عقل کی کسوٹی سے  نہیں جانچے جاسکتے" ۔۔
شاید اسی لئے سپریم کورٹ نے راجستھان ہائی کورٹ کےفیصلے کو معطل کردیا ۔۔

  دوستو: تصویر دیکھ کر یہ مت سمجھ لینا کہ جین مت والے گنجے ہوکر ہائی کورٹ کے فیصلے پراحتجاج کررہے ہیں بلکہ یہ ہمیشہ اسلئے گنجے رہتے ہیں کہ سر پر بال رہنے پر کُھجانے سے کسی" جوں کا خون " نہ ہوجائے ،جین مت میں کسی جاندار کا مارنا کسی صورت میں جائز نہیں۔۔جین مت کے پیروکاروں میں شرح خواندگی (94.1)  فیصد ہے۔۔۔جین مت عقیدے میں ہے کہ سر پر بال نہیں رہنا چاہئے،، جبکہ سکھ مت میں ہے کہ بال نہیں کٹوانا چاہئے۔۔
مزید کیلئے درج لنک پر جائیں اور مُجھے اجازت دیں۔

پوسٹ میں کہی گئی باتوں سے اختلاف / اتفاق کرنا آپ کا حق ہے
          {ہمیشہ رب کی مہربانیاں رہیں }

http://mag.dunya.com.pk/index.php/sunday-spacial/2358/2015-08-30

Sunday, July 19, 2015

" سورۃ التكوير "

منجانبفکرستان
سائنس دانوں کا خوشی کا اظہار 
حقیقی جذبات کا عکس
" ناسا "والوں کو اُس وقت غیریقینی  جیسی صورت حال سے گُرنا پڑا کہ جب خلائی گاڑی " نیو ہورائزنز"نےسگنل بھیجنے بند کر دئیے۔ گھنٹوں پر گھنٹے گزنے کے باجودسگنل نہیں آئے تو مشن سے متعلق ذہنوں میں خدشات جنم لینے لگے یہ سوال  بامعنی سا لگنے لگا کہ کہیں سالوں پر محیط یہ محنت اکارت تو نہیں ہو جائیگی ۔۔۔
 بس اتنی سی تو ہے انسان کی اصل حقیقت۔۔کہ وہ بے بس ہے۔۔اور انسان کی یہی  بے بسی  خُدا  کی پہچان ہے ۔۔۔
تاہم ابھی وہ وقت نہیں آیا ہے کہ(  سوره التكوير آیت 1 اور 2  کی مطابق)  جب سورج لپیٹ دیا جائے گا اور جب تارے بکھر جائیں ۔
بہرحال 13  گھنٹے بعد" نیو ہورائزنز" نے زمین والوں کو سگنل بھیجنے شروع کیئے تو سب کے مُرجھائے ہوئے چہرے خوشی سے کھلِ گئے اور  انسانی عظمت کا ایک اور  نشان " پلوٹو"فتح کا بگلِ بج گیا۔۔۔
مضمون کی تیاری میں مددگار سائیٹ:
 http://www.urduvoa.com/content/us-space-pluto/2863214.html   
پوسٹ میں کہی گئی باتوں سے اتفاق / اختلاف کرنا آپ کا حق ہے
          {ہمیشہ رب کی مہربانیاں رہیں }

Saturday, July 18, 2015

منجانب فکرستان


قارئین کرام ،بلاگرز ساتھی اور اردو سیارہ  کی انتظامیہ کو
  فکرستان کی جانب سے
 دلی


    قبول ہو

Tuesday, June 30, 2015

سوچ کا ٪ تناسب ۔۔

منجانبفکرستان : فطرت مخالف فیصلے کرنے پر
 فطرتی قوانین  چھوڑتے نہیں، سزا دیتے ہیں
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
آنکھ  جو کچُھ  دیکھتی  ہے،لب پہ آ سکتا  نہیں
 محوحیرت ہوں کہ دُنیا کیا سے کیا ہو جائے گی!!
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ 
ایک جانب تو انسان اوِج ثُریا کو چُھونے کی کوشش کر رہا ہے، تو دُوسری جانب اپنے آپ کو  کیچڑ میں لتھڑ رہا ہے۔۔۔
 دُنیا کی سب سے زیادہ تعلیم یافت کہلانے والی امریکی قوم کی سپریم کورٹ نے ہم جنس پرستوں کے درمیان شادی کو قانونی حیثیت  دیدی گویا اب امریکا کی تمام ریاستوں میں ہم جنس پرستوں کے درمیان شادی کو قانونی حیثیت حاصل ہوگئی ہے۔ 
صدر اوباما نے  سپریم کورٹ کے  اس فیصلے کو سرہاتے ہوے اسے مساوات کی جانب ایک تاریخی فتح قرار دیا ۔۔
  جبکہ آئرلینڈ میں ہم جنسوں کے مابین شادی کا فیصلہ بجائے  عدالت کے عوامی ریفرنڈم  کے زریعے کیا گیا، جسکے نتائج حیرت انگیز چونکا نے والے نکلےِ یعنی  ہم جنس پرستوں کی  شادی کے حق میں 62 فیصد جبکہ مخالفت میں صرف 38 فیصد ووٹ پڑے۔۔
آنکھ  جو کچُھ  دیکھتی  ہے،لب پہ آ سکتا  نہیں
 محوحیرت ہوں کہ دُنیا کیا سے کیا ہو جائے گی!!

پوسٹ میں کہی گئی باتوں سے اتفاق / اختلاف کرنا آپ کا حق ہے
          {ہمیشہ رب کی مہربانیاں رہیں }




 

Saturday, June 27, 2015

" برائے آگہی اور غوروفکر کیلئے"

 منجانب فکرستان: روزنامہ  "دنُیا " میں شائع محترم جناب خورشیدندیم
کے کالم کی شئیر نگ: برائے آگہی اور غوروفکر کیلئے۔ 
ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
"           کلچر اور مذہب"
 سیاستِ دوراں سے گریز مشکل ہے لیکن ماہِ رمضان کا مطالبہ ہے کہ موضوعات بدل جائیں، جیسے کلچر اور مذہب۔      
مشاہدہ ہے کہ جمعہ کے روز لوگ شلوار قمیض پہنتے ہیں۔ اس کا تعلق نماز جمعہ سے نہیں ہے۔ یہ صحیح ہے کہ نمازیوںکی بڑی تعداد ہفت روزہ نماز کی قائل ہے۔ لوگوں کی بڑی تعداد نمازِجمعہ کا اہتمام کرتی ہے، اگر چہ وہ روزانہ کی نماز سے غافل رہتی ہے۔ شلوار قمیض کا مگر جمعہ کے ساتھ خصوصی تعلق ہے، نمازِ جمعہ کے ساتھ نہیں۔ ایسا کیوں ہے؟
جمعہ اہلِ اسلام کا دن ہے، جیسے سنیچر یہود کا اور اتوار مسیحیوں کا۔ ہمارے تحت الشعور میں یہ رچ بس گیا ہے کہ شلوار قمیض اسلام کا لباس ہے۔ مذہبی تقریبات میں اور اجتماعات میں ہم بالخصوص اس کا خیال رکھتے ہیں کہ ہمارا پہناوا شلوار قمیض ہو۔ لوگ جنازہ پڑھنے جاتے ہیں تو ترجیح یہی ہوتی ہے۔ عید پر تو خیر یہی لباس پہنا جاتا ہے۔ اس تصور کا ایک حصہ یہ ہے کہ پتلون کو مذہبی تقریبات سے متصادم خیال کیا جاتا ہے۔ لوگ اس کو پسند نہیںکرتے بلکہ کسی دوسرے کو بھی اس لباس میں دیکھ لیں توانہیں ناگوار گزرتا ہے۔ پتلون ہمارے ہاں ماڈرن ہونے کی علامت ہے۔ ماضی میں یہ احساس بہت گہرا تھا لیکن اب اس میں کمی آ گئی ہے؛ تاہم جمعہ تو بدستور شلوار قمیض کا دن ہے۔
میں اس تحقیق میں نہیں پڑتا کہ پتلون کب ایجاد ہوئی اور کس نے کی۔ سپین کے مسلمانوں نے یا فرنگیوں نے؟ میں بات کو لباس کے تہذیبی اور سماجی پہلو تک محدود رکھنا چاہتا ہوں۔ یہ معلوم ہے کہ شلوار قمیض یہاںکا مقامی لباس ہے۔ اگر اسلامی لباس وہ ہوتا ہے جو اﷲ کے آخری رسولﷺ نے پہنا تو سب جانتے ہیں کہ یہ آپ کا لباس نہیں تھا۔ یہ تو اس خطے میں پہنا جاتا ہے جہاں ہم رہتے ہیں۔ یہاں آباد لوگ مذہبی امتیاز سے ماورا، یہی لباس پہنتے ہیں۔ خواتین کا ایک لباس ہے اور اسی طرح مردوں کا بھی۔ یہی معاملہ پگڑی، ٹوپی اور دوپٹے وغیرہ کا بھی ہے۔ برصغیر کی خواتین دوپٹہ اوڑھتی ہیں۔ یہاں کی ہندو خاتون بھی یہی کرتی ہے اور مسلمان بھی۔ شائستگی یا حیا ، ایک قدر ہے جو سب مذاہب کے نظامِ اقدار کا ناگزیر جز ہے۔ باحیا خاتون اپنے لباس کے بارے میں حساس ہوتی ہے۔ اس کا اہتمام وہ اپنے مقامی کلچر کے مطابق کرتی ہے۔ اس کا کسی مذہب سے کوئی تعلق نہیں۔
اس امر واقعہ کے باوجود لوگ خیال کرتے ہیںکہ مذہب کا بھی کوئی لباس ہوتا ہے۔ ایک دور میں یہ موقف بڑے شد ومد کے ساتھ پیش کیا جاتا تھا کہ عرب لباس ، اسلام کا لباس ہے۔ مجھے یاد پڑتا ہے کہ برسوں پہلے، اس موضوع پر امام ابن تیمیہ کی ایک کتاب کا اردو ترجمہ پڑھا تھا جس میںانہوں نے اصرار کیا کہ عرب تہذیب ہی اسلامی تہذیب ہے۔ تاہم علمی سطح پر یہ مقدمہ اپنی جگہ نہیں بنا سکا۔ برصغیرہی میں دیکھ لیجیے۔ ہمارے مذہبی راہنما‘ جو ان مظاہر کے بارے میں بہت حساس ہیں، وہ بھی مقامی لباس پہنتے ہیں۔ یہی معاملہ دیگر علاقوں کا ہے۔ جنوب مشرقی ایشیا میں چلے جائیں۔ انڈونیشیا جیسا ملک جو آبادی کے اعتبار سے مسلمانوںکا سب سے بڑا ملک ہے، وہاں کے علماء مقامی لباس پہنتے ہیں۔ دیگر خطوں میںتو یہ معاملہ صرف لباس تک محدود نہیں ، اس کا دائرہ دیگر مظاہر تک پھیلا ہوا ہے۔ اس لیے کسی خاص لباس یا بود و باش پر اصرار عملاً ممکن نہیں۔ میرا خیال ہے کہ اس کا اطلاق دوسرے تہذیبی مظاہر پر بھی کیا جانا چاہیے۔
کلچرکی تشکیل میں بہت سے عوامل کارفرما ہوتے ہیں۔ ان میں سے ایک مذہب ہے۔ مذہب جز ہے کل نہیں۔ ہم جسے اسلامی نظام معاشرت کہتے ہیں، اس کی اساس چند اقدار پر ہے۔ ان اقدار پر ہر خطے کے مقامی حالات کے مطابق عمل کیا جاتا ہے۔ ہم بعض اوقات اس بات کا ادراک نہیں کرتے۔ یوں بعض ایسی باتوں کو بھی دین کا حصہ مان لیا جاتا ہے جو اصلاً مقامی تہذیبی ضروریات سے پھوٹتی ہیں ، جیسے کثرتِ ازدواج ہے۔ عرب معاشرے میں یہ پہلے سے موجود رواج تھا ؛ تاہم اس کی عملی صورت ایسی تھی جس سے خاتون کا شرفِ انسانیت اور حقوق دونوںمتاثر ہو رہے تھے۔ یہ بات اسلام کی بنیادی
اقدار سے متصادم ہے جو مرد و زن کی ذمہ داریوں میں توفرق کو پیش ِ نظر رکھتا ہے، سماجی مقام اور رتبے میں نہیں۔ یوں اسلام نے اس مقامی رسم کی اصلاح کرتے ہوئے، اسے اپنے نظام اقدار سے ہم آہنگ بنا دیا۔
برصغیر کا معاشرہ بالکل دوسرا ہے۔ یہاں تعددِ ازدواج کا رواج نہیں ، لوگ بالعموم ایک وقت میں ایک ہی نکاح کرتے ہیں۔ اس لیے جب ہم یہاں سماجی بہتری کا کوئی قانون بنائیں گے تو مقامی حالات کی رعایت کریں گے۔ یوں دوسری شادی کے معاملے میں، ریاست یہ حق رکھتی ہے کہ وہ مرد پر کوئی قدغن لگا دے۔ اب تو خیر عرب کے ممالک شام، مصر وغیرہ میں بھی مرد کے اس حق کو غیر مشروط نہیں رکھا گیا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ آج عرب معاشرہ بھی وہ نہیں رہا جو پہلے تھا۔ ناگزیر ہو گیا ہے کہ جدید دور میں قوانین بناتے وقت، اس تبدیلی کو ملحوظ رکھا جائے۔
ہمارے ہاں لوگ جب تعددِ ازدواج کو اس سماجی پس منظر سے اٹھا دیتے ہیں تو اسے قرآن مجید کے ایک حکم کے طور پر پیش کرتے ہیں۔ قرآن مجید حالانکہ اسے ایک بالکل مختلف تناظر میںدیکھ رہا ہے۔ سماج میں جب یتیموں کی کفالت کا مسئلہ پیدا ہوا تو اسلام نے یہ اجازت دی کہ اس کے لیے عرب معاشرے میں موجود تعددِ ازدواج کے رواج سے فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے؛ تاہم اس رواج میں ترمیم کرتے
ہوئے ، اسلام نے خواتین کے حقوق کا تحفظ یقینی بنایا جو عام طور پر ایسے معاملات میں نظر انداز ہوتا ہے۔ ہم کلچراور مذہب کے اس باہمی تعلق کو اکثر نظر انداز کرتے ہیں۔ ہمارے ہاں اکثر مذہبی مباحث کی اساس یہی ہے۔ میرا خیال ہے کہ ہمارا مذہبی طبقہ اگر اس پہلو کو پیش نظر رکھتے ہوئے لوگوں کے سامنے دین کو پیش کرے تو مذہب کے ساتھ اختلاف کے امکانات بہت کم ہو جائیں گے۔
میرا احساس یہ بھی ہے کہ ہمارے سیکولر یا لبرل طبقے کے اکثر اعتراضات کا تعلق دین کے بنیادی مقدمات سے نہیں، اس کے ان مظاہر سے ہے، جو اصلاً مقامی ہیں اور ہم انہیں دینی اقدار کے طور پر پیش کرتے ہیں۔ طالبان پر اعتراضات کی اگر ہم فہرست بنائیں تو نوے فیصد معاملات وہ ہیں جنہیں طالبان نے مقامی تہذیبی اقدار کے تحت اختیار کیا لیکن انہیں یوں پیش کیا جیسے وہ دینی احکام ہیں، جیسے بامیان میں بت شکنی یا بچیوںکی تعلیم کا مسئلہ۔ اگر ہم لبرل طبقے کے اعتراضات کو اس کی نفسیاتی ساخت اور اس کے سوالات کی بنیاد کو سمجھتے ہوئے مخاطب بنائیں تو مجھے پورا یقین ہے کہ نظریاتی تقسیم بہت مدھم ہو جائے اور مشترکہ کلمات کی تعداد بڑھ جائے۔
کل جب میں نمازِ جمعہ کے لیے نکلا تو میں نے دیکھا کہ سب نے شلوار قمیض پہن رکھی ہے اور اکثر سر پر ٹوپی بھی لیے ہوئے ہیں۔ میں سوچتا رہا کہ کلچر جب مذہب بن جاتا ہے تو مذہب کی روح کیسے پس منظر میں چلی جاتی ہے۔ مذہب کلچر بن جائے تو اس کا بھی نقصان ہوتا ہے، پھر مظاہر اہم ہو جاتے ہیں اور تزکیہ نفس کا تصور نگاہوں سے اوجھل ہو جا تا ہے
۔

Friday, May 22, 2015

نّنھے پرندے کا دعو تِ" حمد"۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔

منجانب  فکرستانبرائےآگہی اور غوروفکر کیلئے      
ساتھ میں  خوبصورت ۔   "  حمد"   ۔وڈیو لنک

انسانی عقل کہتی ہے: میں نہ مانوں
۔۔۔۔میں نہیں مان سکتی !! 
خُدائ حکمت کہتی ہے: نہیں مان تی ہے ، تو جا پھر جا کے خود ہی اپنی آنکھوں سے دیکھ لے کہ تقریبًا 10 سے 12 گرام وزن کا حامل نّنھا سا پرندہ "بلیک  پول واربلر" جسکے پروں کا سائز تقریبًا 
 6۔cm6 ہے اسکے باؤجود یہ نّنھا سا ہجرتی پرندہ اپنے ہجرت کا سفر بِنا کہیں رُکے  (Non-stop)۔۔۔ دنِ ہو کہ رات لگاتار محو پرواز رہتے ہوئے 2770 کلو میٹر کا ہجرتی فاصلہ80تا85 گھنٹوں  میں طے کر لیتا ہے۔۔۔
اور نۓ مُقام پر پہنچ کر اپنی میٹھی سُریلی آواز میں اُن لوگوں کوحمد "  سُنا تا ہے جو کہ اللہ  کی  نشانیوں پر  غور کیا  کرتے       ہیں۔۔۔۔۔۔  
   وڈیو لنک: https://www.youtube.com/watch?v=5Ddv4LUAslE 
-----------------------------------------------------------------------------------------------
گوگل لنک: https://www.google.com.pk/search?q=blackpoll+warblers&oq=blackpoll+warblers&aqs=chrome..69i57j69i59l3&sourceid=chrome&es_sm=93&ie=UTF-8

{ہمیشہ رب کی مہربانیاں رہیں }






















Thursday, May 7, 2015

" فکرستان کی شیئرنگ "

فکرستان  کی شیئرنگ :  غور و فکرکیلئے ساتھ میں ویڈیو لنک

"قید میں ہم کسی کے بےگناہ یا گناہ گار ہونے کے بارے میں کچھ نہیں کہہ سکتے۔

 یہ سب تقدیر کے فیصلے  ہیں،

"سب کا یہ عذر کافی ہے کہ تقدیر کے سامنے تمام منصوبے ناکام ہوتے  ہیں" ۔

(ڈاکٹر ذوالفقار علی خان ) ۔ 

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

19 سال بعد ڈاکٹر ذوالفقار کو پھانسی دے دی گئی

6 مئ 2015


ذوالفقار علی خان کو سنہ 1998 میں قتل کے جرم میں پھانسی کی سزا سنائی گئی تھی

ڈاکٹر ذوالفقار علی خان کو آج علی الصبح لاہور کی کوٹ لکھپت جیل میں تختۂ دار پر لٹکا دیا گیا اور یوں اُن کے بقول ’لکھے گئے تقدیر کے فیصلے کی سزا 19 سال کے طویل عرصے کے بعد پوری ہوئی۔‘
ذوالفقار علی خان کو ان کے جیل کے ساتھی قیدی اور عملہ احتراماً ڈاکٹر ذوالفقار کہتے تھے۔ ان کے پاس علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی سے حاصل کردہ ڈاکٹریٹ کی ڈگری بھی تھی جو انھوں نے قید کے دوران حاصل کی۔
ذوالفقار علی خان کو سنہ 1998 میں قتل کے جرم میں پھانسی کی سزا سنائی گئی تھی اور اس کے بعد سے وہ جیل میں تھے جہاں انھوں نے درجنوں قیدیوں کو تعلیم دی اور اپریل سنہ 2009 کے آخر تک ان کے 12 قیدی شاگردوں نے بی اے، 23 نے انٹر اور 18 نے میٹرک کے امتحانات پاس کیے۔



ذوالفقار علی خان نے ایک خط لکھا جو ان کے وکلا نے بی بی سی کو دیا جس میں انھوں نے اپنے جیل کے ایام کے بارے میں تفصیل لکھی، اپنے خدشات، اپنی لاوارث بچیوں کے مستقبل اور ان کی تعلیم کے حوالے سے پریشانیوں کا ذکر کیا۔
اس خط کے بی بی سی تک پہنچنے میں بہت دیر ہوئی کیونکہ فریقین میں مذاکرات آخری لمحے تک جاری رہے اور کبھی امید بنتی کبھی بگڑتی نظر آتی تھی اور اس تحریر میں بھی تاخیر ہوتی گئی۔ ہمارے پاس ان قیدیوں کے خطوط بھی پہنچے جنھوں نے ذوالفقار علی خان کے جیل میں مثالی کردار کے بارے میں لکھا اور اس بارے میں بھی لکھا کہ انھوں نے جیل میں تعلیم کیسے مکمل کی۔
بی بی سی کو موصول ہونے ان چند قیدیوں کے خطوط میں ذوالفقار علی خان کی شخصیت پر بھی روشنی ڈالی گئی ہے۔
راولپنڈی کی اڈیالہ جیل میں موت کی سزا کے منتظر قیدی عبدالرحمان نے انھیں ساتھی قیدیوں کے لیے روشنی کی علامت قرار دیا جبکہ ایک قیدی اشفاق حسین نے لکھا کہ جب وہ جیل میں آئے تو وہ میٹرک پاس تھے تاہم انھوں نے جیل میں ڈاکٹر ذوالفقار کی رہنمائی ایف اے فرسٹ ڈویژن میں پاس کیا اور بی اے کے امتحانات دیے۔


اڈیالہ جیل راولپنڈی میں سزائے موت کے منتظر قیدی اشفاق حسین کا ڈاکٹر ذوالفقار کے بارے میں ایک خط

سزائے موت کے منتظر ایک دوسرے قیدی شکیل غضنفر نے اپنے خط میں لکھا کہ انھوں نے ڈاکٹر ذوالفقار کی زیرِ نگرانی ایف اے اور لسان العربی کے امتحانات پاس کیے۔
ذیل میں ذوالفقار علی خان کے خط کے کچھ اقتباسات پیشِ خدمت ہیں:
’قید میں ہم کسی کے بےگناہ یا گناہ گار ہونے کے بارے میں کچھ نہیں کہہ سکتے۔ یہ سب تقدیر کے فیصلے ہیں سب کا یہ عذر کافی ہے کہ تقدیر کے سامنے تمام منصوبے ناکام ہوتے ہیں۔
’میں نے بحثیت طالب علم پڑھا تھا کہ علم حاصل کرو ماں کی گود سے قبر تک۔ اس طرح علم ایک لازوال دولت ہے، سو میں نے علم حاصل کرنے اور دینے کا سوچ لیا اور اس کو اللہ کا نام لے کر شروع کر دیا۔‘


ڈاکٹر ذوالفقار کے مختلف ڈپلوما جات اور ڈگریوں کا عکس
ڈاکٹر ذوالفقار کے مختلف ڈپلوما جات اور ڈگریوں کا عکس

’میں جب جیل آیا تو فطری بات ہے انسان بہت پریشان ہوتا ہے، اہل خانہ سے جدائی کا غم ہوتا ہے، آزادی چھن جانے کا دکھ ہوتا ہے، دنیا کا آرام و سکون دور بھاگ جاتا ہے اور دنیا کی چھوٹی سے چھوٹی نعمتیں روٹھ جاتی ہیں۔
’انسان وقت کے مرہم اور صبر سے جیل کے اندر وقت گزارنے کے طریقے تلاش کرتا ہے، ہر آدمی طبیعت کے مطابق دوست بناتا ہے، کچھ مطالعہ کرتے ہیں مگر جیل میں وہی کام ممکن ہیں جو یہاں کرنے کی اجازت ہو تی ہے۔‘
ڈاکٹر ذوالفقار کی اہلیہ نے ان کے جیل جانے کے بعد گھروں میں کام کاج کر کے اپنی دو بیٹیوں کی کفالت کی مگر 2006 میں وہ بھی کینسر کا نشانہ بن گئیں جس کے بعد ان کے ذہن پر بیٹیوں کے مستقبل کے حوالے سے خدشات اور فکر نے غلبہ پانا شروع کیا۔
اُن کی بڑی بیٹی نور فاطمہ 18 برس جبکہ چھوٹی فضا 17 برس کی ہیں اور اپنے رشتہ داروں کے پاس مقیم ہیں۔
انہوں نے لکھا: ’آج میں جس دکھ اور قرب میں مبتلا ہوں وہ یہ ہے کہ میں نے اپنی زندگی میں علم سے پیار کیا اور علم کی روشنی بانٹی مگر میری اپنی بیٹیاں حالات کے رحم و کرم پر ہیں اور آج وہ اپنی تعلیم سلسلے کو جاری رکھنے میں مشکلات کا شکار ہیں، مگر مجھے یقین ہے کہ اللہ تعالیٰ ان کی غیبی مدد فرمائے گا۔‘
ڈاکٹر ذوالفقار علی خان نے دورانِ اسیری میں جو ڈگریاں حاصل کیں ان میں ایم اے اسلامیات، ایم اے انگلش، اسلامک لا کورس، پوسٹ گریجویٹ ڈپلوما ان کلینیکل سائیکالوجی، مطالعہ اسلام، مطالعہ حدیث، مطالعہ قران، ترجمہ قرآن، تفسیر قرآن، علمِ تعزیر، ماس کمیونیکشن ڈپلوما، جرنلزم ، فارسی، عربی ، بینکنگ ڈپلوما شامل ہے۔
اس کے علاوہ انھوں نے دو کتابیں لکھیں جن کے مسودے تیار ہیں اور اشاعت کے منتظر ہیں۔

(بشکریہ:   بی بی سی)-
 _______________________________________________________
https://www.youtube.com/watch?v=AYmu59rorXo
{ہمیشہ رب کی مہربانیاں رہیں }