Image result for monument valley
ہر چیز سے عیاں ہے،ہرشے میں نہاں ہے،خالِق کائنات، مالِک کائنات
عقلِ کُل،توانائی کُل، ہمہ جہت، ہمہ صِفت،خالِق کائنات، مالِک کائنات
آنکھیں کہ جِن سے میں دیکھا ہوں میری نہیں، عطائے خُداوندی ہے
  پاؤں کہ جِن سے میں چل تا ہوں میرے نہیں،عطائے خُدا وندی ہے
غرض یہ کہ میرے  وجود کا ذرہ  ذرہ   میرا  نہیں ،عطائے خُداوندی ہے
میرے خالِق میرے مالکِ میرے پروردگارانِ نعمتوں کا بے انتہا شُکریہ  


Thursday, October 14, 2010

کاغذ کے بے جان ٹُکڑے (افسانہ

فکرستاں چینل سے میں ہوں آپکا ساتھی آپکا دوست "ایم ۔ ڈی " آج میں آپکی ملاقات ایک نئے افسانہ نگار سے کرارہا ہوں وہ اپنی پہلی تخلیق لیکر آئے ہیں یعنی پہلا نشہ اور پہلا خمار والی بات ہے ۔ جی جناب تو سنائے اپنا لکھا ہوا افسانہ ۔۔۔ذرا جھجک محسوس ہورہی ہے ۔۔۔شروع شروع میں ایساہی ہوتا ہے ،چلئے سنائے ۔۔۔ شمسہ نفسیات کی پروفیسرتھیں ،تھیں تو وہ 46 سال کی لیکن لگتیں 35/36کی تھیں خوبصورت ہونے کی وجہ سے پروانے منڈلاتے تھے لیکن کوئی پروانہ اُنہیں متاثر نہ کرسکا ، انکے مقالات اہم جریدوں میں شائع ہوتے تھے ،انکے مقالات کا موضوع ہمیشہ کوانٹم تھیوری اور تصووف کو مدغم کرنے کی کوشش ہو تی تھی , یعنی سائنس اور مذہب کو یکجا کرنے کی کوشش،جس پر اُنہیں سخت تنقید سہنی پڑتی تھی - مگر وہ اپنے آپ کو یہ کہکر مطمین کر لیتیں کہ دُنیا میں کوئی ایک شخص بھی تو ایسا نہیں ہے کہ جس پر تنقید نہ ہو تی ہو - مگر تنقید کرنے والوں کے سخت سوالات کے اُنہیں مدلل جواب دینے پڑتے تھے - رات وہ کافی دیر تک ذہن کو کوانٹم تصووف پرفکس کر کے جاگتی رہی ہے ،جسکا نتیجہ اُسے اپنے نظریہ کی حمایت میں کافی ٹھوس دلائل مل گئے تھے،وہ کافی خوش تھی - اسنے جلدی میں ناشتہ کیا اے/سی خراب ہونے کی وجہ سے کار کے شیشے کھلے ہی رہنے دیئے ، کار چل رہی تھی لیکن وہ توکوانٹم تصووف میں گم تھی گیئر بھی نجانے کون بدل رہا تھا، جیسے ہی کار سگنل پر رُکی ، عورت کی آواز نے اُسے چونکا دیا ، مجھ بد نصیب کی کچھ مدد کر دو ، اسنے دیکھا ایک بچہ عورت کے گود میں ، ایک پیٹ میں اور ایک انگلی میں ہے ، اسنے اتنی زور سے چیخ کر کہا "معاف ..کرو" کہ عورت بیچاری ڈر کر پیچھے ہٹ گئی ،اتنے میں سگنل کُھل گیا - وہ خود اپنے آپ سے شرمندہ ہوگئی کہ یہ اس سے کیا حرکت سر زد ہو گئی ،پڑھا نے میں بھی اُسے مزا نہیں آیا ، اب ذہن میں کوانٹم تصووف کی جگہ - بھکارن کے الفاظ اور اسکے بچوں نے لے لی تھی ، اُسنے واپسی میں گھر جانے کیلئے دوسرا راستہ اختیار کیا کہ کہیں دوبارہ بھکارن کا سامنا نہ کر نا پڑ جائے ۔۔۔گھر پہنچ کر اپنی امی سے باتوں میں مصروف توہو گئی ،لیکن لاشعوری طور پر ایک انجانے خوف اور بیچینی میں مبتلا تھی، وہ اپنی اس کیفیت کو سمجھ نہیں پارہی تھی ، رات کو بیڈ پر لیٹے لیٹے، وہ مختلف زاویوں سے اپنی اس کیفیت کا بطور ایک نفسیات داں تجزیہ کر رہی تھی کہ ایک ایسا خیال اسکے ذہن میں آیا کہ وہ چونک پڑی اور وہ ایک بار پھراُسی طرح زور سے چیخ پڑی " نہیں " لیکن یہ لاشعوری چیخ اس بات کی گوا ہی دے رہی تھی کہ یہ ہی سچ ہے ، چور پکڑا گیا تھا ، چیخ کی آواز سن کر امی بھی آگئیں ، وہ امی سے لپٹ پڑی ، کیا کوئی خواب دیکھا ، نہیں امی سوئی کہاں تھی میں تو جاگ رہی تھی ، امی سوالیہ نظروں سے اسے دیکھنی لگی ، امی آپ مجھے بتائیں ، خالق کائنات نے ہر ایک کو اسکا وصف عطا کیا ہے نا اور اگر کوئی اپنی ہٹ دھرمی سے اس میں کوتاہی کرتا ہے تو کیا اُسے سزا ملے گی ؟ یہ کہتے ہوئے وہ رو پڑی ، امی کو حیرت ہوئی ، شمسہ تم اور یہ آنسو، تم تو چٹان کیطرح مظبوط اور فولاد کی طرح سخت تھیں آج تمہیں یہ کیا ہو گیا ہے کہ اسطرح بہے جارہی ہو ، تم نے آج تک شادی اسلئے نہیں کی کہ میں اتنا زیادہ کما رہی ہوں ،مرد کی غلامی میں کیوں جاؤں حالانکہ کوئی کسی کی غلامی میں نہیں جاتا یہ صرف سوچ کا پھیر ہے ،خالق نے دونوں کو ایک دوسرے کے لئے بنایا ہے ، اسی طرح تم نے 46سال گُزار دیئے لیکن آج میں یہ کیا دیکھ رہی ہوں کہ اتنی ٹھوس چٹاں یوں ریزہ ریزہ ہورہی ، امی یہی خیال نے تو مجھے ایک طرح کے احساس گناہ جیسے احساس میں مبتلہ کردیا ہے - امی آپ میرے لئے دعا کریں وہ رو رہی تھی یہ میں نے کیا کیا اپنے میں موجود مامتا کو میں نے خود ہی مار دیا ، کیا میں گناہ گار ہوں ، وہ مسلسل رو رہی تھی ۔۔۔نہیں میرے بچے ، تمہارے آنسؤں سے تو میں پگھل گئی ہوں ، جبکہ میں تو صرف تمہیں وجود میں لانے کا ایک زریعہ ہو ں ،اصل تمہارا خالق تمہیں کیوں نہیں معاف کرے گا میرے پاس تو اسکی مامتا کا عشیروں کا عشیر بھی نہیں ہے ۔۔۔۔امی میں نے فیصلہ کیا ہے کہ کسی بچی کو گود لے لونگی ، اور شادی بھی کروں گی ۔۔۔میرے بچے کتنے اچھے اچھے رشتے آئے تھے تمہارے لئے ،لیکن تم نےکسی کی کم تنخواہ کا بہانہ بنایا تو کسی کی کم تعلیم کا ، کسی کی مونچھیں تمہیں نہ بھائیں تو کوئی قد میں چھوٹانکلا غرض تمہارے معیار پر کوئی پورا نہ اُترا ، بہر حال صبح کا بھولا شام کو گھر آجائے تو اُسے بھولا نہیں کہتے ،مگر میں حیران ہوں کہ یہ چٹان پگھلی کیسے۔۔۔امی یہ بالکل سچ ہے کہ میری انا بہت موٹی ہوگئی تھی ،لیکن ایک بھکارن کی چوٹ نے میرے اندرکے لاوے کو باہر نکال دیا ، کل میں اس سے ملوں گی ۔۔۔میرے بچے یہ تم نے بہت اچھا سوچا ہے ،میں خود بہت پریشان رہتی تھی کہ میرے بعد تم بالکل اکیلی ہوجاؤگی ۔۔ صبح ناشتے کے بعد شمسہ نے امی سے کہا دُعا کریں کہ وہ عورت پھر اُسے مل جائے ، آج اسنے اے/سی ٹھیک ہونے کے باوجود کار کے شیشے کھلے رکھے ہوئے تھے ، اس مخصوص سگنل سے زرا پہلے کار کی رفتار کو اسنے اسطرح سے اڈجسٹ کیا کہ سگنل اُسے بند ملے - وہ کامیاب رہی ، وہ عورت کار کے قریب آکر صدا لگائی مجھ بد نصیب کی کچھ مدد کردو ،لیکن شمسہ کو دیکھ کر پیچھے ہٹنے لگی - شمسہ نے آواز دےکر اسے اپنے پاس بلایا اور کہا تم اپنے آپ کو بدنصیب کہتی ہو جبکہ تم خوش نصیب ہو کہ تمہارے پاس تو یہ زندہ بولتے ہوئے ہیرے ہیں ، تم تو تخلیق کار ہو، تم نے خالق کی منشا پوری کردی ہے ، تم مکمل عورت ہو ، میں تو ادھوری عورت ہوں ، تم مجھے خوش نصیب سمجھتی ہو( یہ کہتے ہوئے اُسکی آواز بھرا گئی) جبکہ میرے پاس اسنے نوٹوں کی گڈی اسکو دکھاتے ہوئے بولی "یہ بےجان کاغذ کے ٹکڑوں کے سوا کچھ بھی نہیں ہے ،یہ کہتے ہوئے وہ روپڑی ،اور پھر روتے ہوئے بولی اب بولو کون بد نصیب ہے ؟ اتنے میں سگنل کھل گیا اسنے وہ نوٹوں کی گڈی عورت کے حو الے کردی - اور اپنے دل میں ٹھان لیا کہ آئندہ وہ اس راستہ سے کبھی نہیں گزرے گی -بہت شکریہ

Sunday, October 10, 2010

جمعے کے خطبے

فکرستان چینل سے میں ہوں آپکا ساتھی آپکا دوست ،ایم-ڈی؛ اس چینل کے زریعے آپکی ملاقات مختلف لوگوں سےہُوا کرے گی۔۔

اب میں آپکی ملاقات ایک دانشور سے کرا رہا ہوں ؛ السلام علیکم ۔۔۔واعلیکم السلام جناب سب سےپہلے آپ ہمیں
یہ بتائیں کہ ملک میں مذہبی جگہوں پر خود کش حملوں کی کیا وجہ
دیکھئے اس میں کئی فیکٹر شامل ہیں مثلا"فرقہ واریت کی انتہا پسندی
،ایجنسیاں ، دُشمنیاں وغیرہ ، لیکن اسکا سب سے زیادہ نقصان اسلام کو ہو رہا ہے ۔۔۔ اچھا جناب جو فیکٹر آپنے گنوا ئے ہیں انکی

وضاحت فر مائیں گے ۔۔۔اصل فیکٹر تو فرقہ واریت کی انتہا پسندی ہے باقی اس کی آڑ میں پاکستان دشمن ملکوں کی ایجنسیاں اپنے

مقاصد حاصل کر رہی ہیں ۔۔۔ پاکستان میں قائم مدرسوں کے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے ؟ مذہبی تعلیم کے

ان مسلکیمدرسوں میں اپنے اپنے مسلک کی حقانیت کو اُجاگر کرنے کے لئے جو انداز اپنایا جاتا ہے وہُ ایسا ہوتا ہے

کہدوسرے مسلک والوں پر زد پڑے ،مدرسوں کی تعلیم سے فارغ ہوکر جب یہ اپنے مسلکی مسجد میں امامت کرنے

لگتے ہیں تو گویا اُنہیں ایک سلطنت مل جاتی ہے ، عزت و احترام ملنے پر انکے دماغ ساتویں آسمان پر پہنچ جاتے ہیں،

اب وہ اعلیٰ بن جاتے ہیں ، اور کیوں نہ ہوں آپ تو ڈاکٹر ہیں ، انجینئر ہیں ،پروفیسر ہیں لیکن دینی تعلیم آپکے پاس

نہیں ہے اسی لئے وہ ، جمعہ کے خطبوں میں جوش خطابت میں ایسی باتیں بھی کہہ جاتے ہیں جو نہ صرف عقل وخرد

کے خلاف ہوتی ہیں بلکہ اسلام کیلئے بھی سخت نقصان دہ ہوتیں ہیں اورفرقہ واریت کو بھی ہوا دیتی ہیں یہ اپنی بات

میں زور پیدا کرنے کیلئے اُسکوحدیث سے بھی منسلک کردیتے ہیں ، یہ ہی وجہ ہے کہ لا تعداد حدیثیں جمع ہوگئیں

ہیں یہ ضعیف،غریب ،متروک ، موضوع،مبہم حدیث کی قسمیں کہاں سے آگئیں ، ان زبانی خطبوں نے اسلام کو

بہت نقصان پہُنچا یا ہے۔۔۔ اچھا جناب اب آپ ہمیں یہ بتائیں کہ مدرسوں سے فارغ جو مسجدوں میں نہیں جا

پاتے ہیں ،وہ کیا کرتے ہیں ؟ وہ ان مسلکوں کے محافظ یعنی یوتھ ونگ بن جاتے ہیں ، دیکھیں یوتھ میں فطری طور

پر کچھ کر گزرنے کا جذبہ ہوتا ہے ،آپ نے اسپورٹ چینل میں اس جذبہ کی جھلک دیکھی ہوگی کہ وہ کسطرح سے

موٹر سائیکل کو ہوا میں اُڑاتے ہیں کہ موت کی اُنہیں پروہ نہیں ہو تی ہے ، ہمارے یہاں یوتھ کے اسی جذبہ کو

اپنے مقاصد کیلئے مذہبی جماعتیں بھی استعمال کر تی ہیں اور سیاسی جماعتیں بھی جبکہ ترقی یافتہ ممالک یوتھ کے اسی

جذبہ کو مختلف کھیلوں کے مقابلوں ،مختلف فنون کے مقابلوں اور تعلیمی مقابلوں کے زریعہ صحت مند راستہ فراہام

کرتے ہیں، یقین کریں پاکستان میں یوتھ کی اس بربادی کو دیکھ کر بہت دُکھ ہوتا ہے ۔۔۔اب آپ کے نزدیک اس

کا حل کیا ہے ؟میرے نزدیک اسکا بہترین حل یہ ہے کہ مسلم اُمہ حضورﷺ کے آخری خطبہ پر عمل پیرا ہوں

حضورﷺنے خطبہ میں کس قدر حکیمانہ الفاظ میں مسلمانوں کو تلقین کی ہے کہ انتہا پسندی سے بچو ، میرے بعد

فرقوں میں نہ بٹ جانا کہ تم سے پہلی قومیں فرقوں میں بٹ کر تباہ ہو گئیں ، فرقہ پرست علماؤں نے جان بوجھ کر

حضور ﷺ کے خطبہ کو پس پشت ڈال دیا ہے کہ اُس میں فرقہ پرستوں کے لئے کوئی گنجائش نہیں ہے ،یہ تو میں

نے موقع کی مناسبت صرف ایک شق کی بات کی ہے جبکہ پورا خطبہ پوری انسانیت کے لئے مشعل راہ ہے، اقوام

متحدہ کے انسانی حقوق کے چارٹر میں اسی خطبہ کی جھلک نظر آتی ہے ،میرے خیال میں آج تک دنیا میں کسی

انسان نےانسانیت کی فلاح کیلئے اتنے اچھے نکات نہیں پیش کئے ہیں جو کہ اس خطبہ میں موجود ہیں میرے خیال

میں اس خطبہ کو اتنا زیادہ ہائی لائٹ کیا جانا چاہئیےکہ یہ مسلمانوں کی عملی زندگی میں شامل ہوجائے - انہیں پر عمل

پیرا ہو کر انسانیت فلاح پاسکتی ہے ، جوکہ خالق کائنات کامقصد ہے،تمام فرقہ پرست علماؤں کو چاہیئے کہ اُمہ پر رحم

فرمائیں اپنی انا کی غلامی اور اپنی اپنی شناختوں کو نکال کر دور پھینکیں سر جوڑ کر بیٹھیں حضور ﷺ کے خطبہ کی

روشنی میں ایک راہ عمل بنائیں اور اُس پر عمل پیرا ہوں ،آخری بات یہ ہے کہ مسلم اُمہ کو چاہیئے کہ جمعوں کے

خطبوں میں حضور ﷺ کے آخری خطبہ کے تمام نکات علاقائی زبان میں پڑھنا ضروری قرار دیں ، یہی جمعہ کا

خطبہ ہونا چاہئے-بہت شُکریہ کہ آپنے ہمارے لئے وقت نکالا؛آپ کا بھی شُکریہ کہ مجھےبولنے موقع دیا-بہت شکریہ

Saturday, October 2, 2010

کیا نماز برائیوںسے روکتی ہے ؟

قرآن کا فرمان تو یہی ہے کہ نماز برائیوں سے روکتی ہے - اب سوال پیدا ہوتا ہے کہ ہم نماز روزے کے اتنے پابند ہونے کے باوجود اتنی زیادہ برائیوں میں کیوں ملوث ہیں -غور کرنے پر جو بات میرے سمجھ میں آئی وہ میں آپ لوگوں سے شیرز کرنا چاہتاہوں -ہم اللہ کے گھر میں بیٹھ کر اللہ سے صراط مستقیم پر چلنے کی بات تو کرتے ہیں لیکن جیسے ہی نماز ختم ہوتی ہے -ہم صراط مستقیم کو مسجد میں ہی چھوڑ دیتے ہیں -مسجد سے باہر نکل کر منشیات فروش منشیات بیچتاہے ،حاجی صاحب اپنی جعلی دواؤں کی فیکٹری چلے جاتے ہیں ،ٹریفک پولیس والا رشوت لینے کھڑا ہوجاتا ہے ، دودھ والا دودھ میں ملاوٹ کرتا ہے ، اسمبلی والا جعلی ڈگری پر جعلی حلف اُٹھاتاہے ، امراء ٹیکس نہیں دیتے قرضے معاف کرواتے ہیں ، صاحب آفس کی اسٹیشنری گھر میں استعمال کرتا ہے جعلی ٹینڈروں پر کمیشن لیتا ہے ،آفس کی کار بمع پیٹرول گھر میں استعمال ہوتی ہے ، فلم سٹار ریما کہتی ہے میں تہجد گزار ہوں ، ایسا کیوں ہےجبکہ یہ سب نمازی ہیں -ہُوا یہ ہے کہ ہمارے علمائے کرام نے نماز کی پابندی کی تاکید جس شدومد سےکی اس شدومد سے نماز کے مقصد کو اجاگر نہیں کیا ، آج بھی مدرسوں میں یہی کچھ ہورہا ہے - جبکہ قرآن نے تو نماز کے مقصد کو واضع کردیا کہ نماز برائیوں سے روکتی ہے، اب یہ علمائے کرام کا کام تھا کہ بتاتے کہ نماز برائیوں سے کیسے روکتی ہے ، بتاتے کہ دن میں پانچ بار نماز کی ادائیگی میں کیا حکمت ہے؟ سورہ فاتحہ میں ایسا کیا فلسفہ ہے کہ اسکے بغیر نماز نہیں ہوسکتی ، اور بتاتے کہ سورہ فاتحہ میں سیدھی راہ اور صراط مستقیم جیسے الفاظوں کی کیا اہمیت ہے ؟ غرض کہ علمائے کرام نے نماز کے مقصد پر زور نہیں رکھا ،نمازکی ادائیگی پر زور دیا جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ نماز ایک معاشرتی رسم بن کر رہ گئی ہے کہ معاشرے میں نمازی کو عزت کی نظر سے دیکھا جاتا ہے - اب آپ خود غور کریں ، دن میں پانچ بار اللہ کے گھر میں بیٹھ کر صراط مستقیم پر چلنے کی بات کرتے ہیں اُن لوگوں راہ پر چلنے کی بات کرتے ہیں جن لوگوں نے فلاح پائی اوراُس راہ سے بچنا چاہتےہیں جو بھٹکے ہوؤں کی ہے کہ جن پر غضب نازل ہوا -لیکن راہ وہی اپنائے ہوئے ہیں جو بھٹکےہوؤں کی ہے کہ جن پر اللہ کا غضب نازل ہوا دیکھ لیں آج پوری دنیا میں رسوا ہورہے ہیں کہ نہیں ساری آفتیں ہم پہ آرہی ہیں کہ نہیں آج ہم عذاب زدہ قوم ہیں کہ نہیں - آج آپ مسجد سے باہرنکلنے والے کسی نمازی سے پوچھیں کہ بھائی نماز سے کیا حاصل کیا - وہ آپکو بے وقوف اور جاہل سمجھے گا اور کہے گا نماز سے فا ئدہ کی بات کرتا ہے؟ وہ کہے گا آپکو نہیں معلوم یہ اللہ تعلیٰ کی طرف سے بندوں پر فرض عبادت ہے، میں نے فرض کی ادائیگی کردی ہے - اب میں آفس جارہا ہوں انکم ٹیکس آفس میں ہوں کام پڑے تو آجانا -والدین بچوں کو نماز سکھا تے ہیں کہ یہ پڑھنا ہے اور اسطرح کرنا ہے - نماز کے مقاصد کوئی نہیں بتاتا صرف نماز پڑھنا سکھایا جاتا ہے - نتیجہ بچے بھی والدین کی طرح نماز کی ادائیگی کرتے رہتے ہیں اور پھر اسی طرح سے وہ نماز کو اگلی نسل میں منتقل کردیتے ہیں - اسلام صراط مستقیم ہے انسان کی فلاح صراط مستقیم میں ہے- آج دنیا میں دیکھ لیں جو معاشرہ جتنا صراط مستقیم پر قائم ہے وہ اُتنا ہی ترقی یافتہ اور فلاحی معاشرہ ہے - ہم بھی فلاحی معاشرہ قائم کرنا چاہتے ہیں اور ترقی کرنا چاہتے ہیں تو ہمیں صراط مستقیم کو اپنانا ہوگا - ہمیں بے مقصد رسمی نماز کو چھوڑکر اُس با مقصد نماز کو اپنانا ہوگا جو برائیوں سے روکتی ہے - ہمیں اپنی عملی زندگی کو اس راہ پر ڈالنا ہوگا کہ جس پر چلنے کے لئے مسجد میں بیٹھ کر خدا سے مددکی دُعا مانگی جاتی ہے - ورنہ مسجد میں جاکر اللہ تعلیٰ سے بار بار دُعا مانگنے کا کیا حاصل ہے یہی نہ کہ یہ دُعا ہماری عملی زندگیوں میں مضبوطی سے جڑ پکڑ لے تاکہ ہم بُرائیوں سے بچے رہیں جو کہ نماز کا مقصد ہے - بہت شکریہ